13 July 2019 - 12:36
‫نیوز‬ ‫کوڈ‬: 440790
فونت
ایت اللہ کاظم صدیقی:
ایران کے دارالحکومت تہران کے امام جمعہ نے کہا ہے کہ یورپی ملکوں نے ایٹمی معاہدے سے امریکا کے نکلنے کے ایک سال بعد بھی اس عالمی معاہدے پر نہ صرف عمل نہیں کیا بلکہ انہوں نے عملی طور پرامریکا کی پیروی کی۔

رسا نیوز ایجنسی کی رپورٹ کے مطابق،ایران کے دارالحکومت تہران کے امام جمعہ ایت اللہ کاظم صدیقی نے اس ہفتے نماز جمعہ کے خطبے میں کہا کہ ایٹمی معاہدے سے امریکا کی علیحدگی اور ایران کے خلاف دوبارہ پابندیوں کا نفاذ امریکا کے لئے ذلت و رسوائی ہے۔

انہوں اس بات کی جانب اشارہ کرتے ہوئے کہ امریکیوں نے شروع سے ہی ایٹمی معاہدے کی خلاف ورزی کی اور پابندیوں میں اضافہ کیا، کہا: ایران کی جانب سے یورپ کو ایٹمی معاہدے پر عمل درآمد کے لئے دی گئی ساٹھ روزہ مہلت اب ختم ہوگئی ہے اور اب دوبارہ انہیں مہلت نہیں دی جاسکتی کہا کہ ایٹمی معاہدے کی شق نمبر چھبیس اور چھتیس کے مطابق اگر معاہدے کے کسی فریق نے خلاف ورزی کی تو فریق مقابل کو بھی یہ حق حاصل ہے کہ وہ اپنے وعدوں پر عمل درآمد کو روک دے۔

تہران کے خطیب جمعہ نے اس بات پر زور دیتے ہوئے کہ ایران ایٹمی معاہدے کی امریکا اور یورپ کے ذریعے کی گئی وعدہ خلافیوں کے بعد اب اپنے یورینیم کی افزودگی کی سطح کو بیس فیصد تک لے جائے گا کہا:  یورینیم کی افزودگی کے لئے ایران کا پہلا اور دوسرا قدم معاہدے کی شقوں کے عین مطابق ہے۔

انہوں نے علاقے میں دہشت گرد گروہوں کے خلاف جنگ میں ایران کی فتح اور دہشت گردوں کے وحشیانہ اقدامات کے جواب میں ایران کی میزائلی قوت کا ذکرکرتے ہوئے کہا کہ جبل الطارق میں ایران کے آئل ٹینکر کو روک کر ایران کی طاقت کو نظر انداز کرنے کی کوشش کی گئی ہے اور جلد ہی تہران کا بھرپور جواب برطانیہ کو پشیمان کردے گا۔ /۹۸۸/ ن

 

تبصرہ بھیجیں
نام:
ایمیل:
* ‫نظریہ‬:
‫برای‬ مہربانی اپنے تبصرے میں اردو میں لکھیں.
‫‫قوانین‬ ‫ملک‬ ‫و‬ ‫مذھب‬ ‫کے‬ ‫خالف‬ ‫اور‬ ‫قوم‬ ‫و‬ ‫اشخاص‬ ‫کی‬ ‫توہین‬ ‫پر‬ ‫مشتمل‬ ‫تبصرے‬ ‫نشر‬ ‫نہیں‬ ‫ہوں‬ ‫گے‬
تازه ترین خبریں
مقبول خبریں