25 July 2019 - 20:23
‫نیوز‬ ‫کوڈ‬: 440894
فونت
حجت الاسلام احمد مروی :
آستان قدس رضوی کے متولی نے اہل بیت عصمت و طہارت علیہم السلام کی تعلیمات پر عمل کرنے کو جدید اسلامی تہذیب تک پہنچنے کی راہ قرار دیا۔

رسا نیوز ایجنسی کی رپورٹ کے مطابق آستان قدس رضوی کے متولی حجت الاسلام والمسلمین احمد مروی نے بیرون ملک میں مقیم ایرانی اساتذہ و طلباء کے اجتماع میں جدید اسلامی تہذیب کے عنوان سے مشہد قدس میں منعقدہ کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے اس اشارہ کے ساتھ کہ جدید اسلامی تہذیب، اہل بیت علیہم السلام کی تعلیمات کی روشنی میں ہی وجود میں آئی ہے، کہا: اسلامی تاریخ پر نگاہ ڈالئے توپتہ چلتا ہے کہ اسلامی تہذیب و تمدن، اہل بیت علیہم السلام کی برکت سے وجود میں آیا ہے۔

حوزہ علمیہ کے استاد نے حضرت رسول اکرم (ص) کی حدیث ثقلین کی طرف اشارہ کیا اور کہا: حضرت رسول اسلام صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم اس حدیث شریف میں فرماتے ہیں :انی تارک فیکم الثقلین ؛ کتاب اللہ و عترتی ، ما ان تمسکتم بھما لن تضلوا ابدا۔۔۔ میں تمہارے درمیان دو گرانبہا چیزیں چھوڑ کر جارہا ہوں ایک کتاب خدا، قرآن کریم اور دوسرے میری عترت اہل بیت (ع) ۔ جب تک کہ ان دونوں سے متمسک رہو گے کبھی بھی گمراہ نہیں ہوسکتے۔ جو معاشرہ بھٹک چکا یا گمراہ ہوچکا ہو وہ کبھی بھی تمدن ساز نہیں ہو سکتا یا کسی تہذیب کو جنم نہیں دے سکتا ۔

انہوں نے سعودی عرب میں موجودہ غیر اسلامی ثقافت کی ترویج کی پالیسی کی طرف اشارہ کرتے ہوئے کہا :سعودی عرب اسلام کی پیدائش کی جگہ ہے ، سرزمین وحی ہے اور وہ ملک ہے کہ جہاں مسلمانوں کا قبلہ اور دنیا کا مقدس ترین مقام پایا جاتا ہے ، لیکن کیا وہ اسلامی تہذیب و تمدن کا مدعی بھی ہوسکتا ہے؟ کیا دشمنان خدا اور غیروں کی غلامی ، ان پر انحصار اور خدمت کا نام تہذیب و تمدن ہے؟

امام رضا علیہ السلام کے روضہ مبارک کے متولی نے بیان کیا : تاریخ گواہ ہے کہ اہل بیت علیہم السلام کی برکت سے اسلامی تہذیب وجود میں آئي ہے، اسلامی تہذیب و تمدن اہل بیت علیہم السلام کی تعلیمات کے بغیر صرف گمراہی و ضلالت ہے۔

انہوں نے ایرانی تہذیب پر حضرت امام علی رضا علیہ السلام کی موجودگی نے جو اثرات ڈالے ہیں ان کی طرف اشارہ کرتے ہوئے  نے کہا: ایران ابتداء میں اہل سقیفہ کے ہاتھوں فتح ہوا اور ایران کی فتح میں اہل غدیر کا کوئی کردارنہیں تھا ، لیکن حضرت امام علی رضا علیہ السلام کی آمد سے ایران ، ایک عظیم ثقافتی مرکز بنا اور غدیر سے آشنا ہوگیا اور اب یہ ایرانی تہذیب، حضرت امام علی رضا علیہ السلام کے وجود مبارک اوران کی متاثرکن شخصیت کی برکتوں کی وجہ سے ہے۔

حجت الاسلام احمد مروی نے کہا: حضرت امام علی رضا علیہ السلام کی اتّباع میں سادات و امامزادہ حضرات بھی ایران تشریف لائے کہ ان میں سے ہر ایک تہذیب و ثقافت کے مرکز تھے اور دراصل یہ بھی ہمارے انہیں عظیم امام کے وجود با برکت کی وجہ سے ہے ۔

آستان قدس رضوی کے متولی نے حضرت امام علی رضا علیہ السلام کو «أَشِدَّاءُ عَلَى الْكُفَّارِ رُحَمَاءُ بَيْنَهُم» کی تجلی قرار دیا اور کہا: سب ہی معصومین علیہم السلام کے وجود میں تمام اخلاقی فضائل جمع تھے، لیکن ان میں سے بعض حضرات ، کچھ مخصوص اخلاقی فضائل کے مالک تھے۔ جیسے جناب رسول خدا (ص) اور حضرت امام علی رضا علیہ السلام میں رحمت و مہربانی بہت زیادہ متجلی تھی ۔

 انہوں نے تاکید کرتے ہوئے بیان کیا :حضرت امام علی رضا علیہ السلام نے مدینہ سے طوس تک اپنے سفر میں ہر موقع پر حق بیانی کی، حق وباطل کے درمیان فرق کو ظاہر کیا اور ظالموں و ستمگروں کے چہروں سےنقاب اٹھاتے چلے گئے۔

حجت الاسلام اجمد مروی نے کہا: حضرت امام علی رضا علیہ السلام نے حدیث سلسلۃ الذہب میں انسانیت کو تعلیم دی کہ توحید ، امامت کے ذریعہ ہی قابل فہم ہے۔ آپ نے اس حدیث میں مامون ، بنی عباس اور بنی امیہ کی ظالم و ستمگر حکومت پر خط بطلان کھینچ دیا اور ہمیشہ کے لیے انسانیت کی تاریخ کو روشن اور واضح کردیا۔

تبصرہ بھیجیں
نام:
ایمیل:
* ‫نظریہ‬:
‫برای‬ مہربانی اپنے تبصرے میں اردو میں لکھیں.
‫‫قوانین‬ ‫ملک‬ ‫و‬ ‫مذھب‬ ‫کے‬ ‫خالف‬ ‫اور‬ ‫قوم‬ ‫و‬ ‫اشخاص‬ ‫کی‬ ‫توہین‬ ‫پر‬ ‫مشتمل‬ ‫تبصرے‬ ‫نشر‬ ‫نہیں‬ ‫ہوں‬ ‫گے‬
تازه ترین خبریں
مقبول خبریں