01 August 2019 - 16:28
‫نیوز‬ ‫کوڈ‬: 440952
فونت
کشمیر میں عاشورائے حسینی کے جلوس پر لگی پابندی ہٹانے کے مطالبے بڑھ گئے ہیں۔

رسا نیوز ایجنسی کی رپورٹ کے مطابق ہندوستان کے زیر انتظام کشمیر کےلال چوک سرینگر سے برآمد ہونے والے 8 اور 10 محرم کے تاریخی جلوس ہائے عاشورہ پر 28 سال سے لگی قدغن ہٹانے کا مطالبہ لیکر انجمن شرعی شیعیان کے سرکردہ اراکین اور متعدد ائمہ جمعہ و الجماعت زیر سرپرستی آغا سید حسن نے پریس کالونی میں پُرامن احتجاجی دھرنا دیا۔

احتجاجیوں نے تاریخی جلوس ہائے عاشورا پر حکومتی قدغن کو بلاجواز قرار دیتے ہوئے گورنر انتظامیہ سے پرزور مطالبہ کیا کہ اس سال ان جلوسوں کی برآمدگی کو یقینی بنانے کے لئے اقدامات کئے جائیں اور بلا تاخیر قدغن ہٹانے کا اعلان کیا جائے تاکہ ان جلوسوں کے متعلقین بروقت تیاریاں کرسکیں۔

مظاہرین نے کہا کہ وادی میں ہر فرقہ کے لوگ اپنے مذہبی رسومات، جلسے اور جلوس وغیرہ پرامن طور پر انجام دے رہے ہیں اور حکومت انہیں مکمل سیکورٹی فراہم کررہی ہے لیکن صرف عاشورہ کے ماتمی جلوسوں پر پابندی ہے۔

تبصرہ بھیجیں
نام:
ایمیل:
* ‫نظریہ‬:
‫برای‬ مہربانی اپنے تبصرے میں اردو میں لکھیں.
‫‫قوانین‬ ‫ملک‬ ‫و‬ ‫مذھب‬ ‫کے‬ ‫خالف‬ ‫اور‬ ‫قوم‬ ‫و‬ ‫اشخاص‬ ‫کی‬ ‫توہین‬ ‫پر‬ ‫مشتمل‬ ‫تبصرے‬ ‫نشر‬ ‫نہیں‬ ‫ہوں‬ ‫گے‬
تازه ترین خبریں
مقبول خبریں