11 August 2019 - 11:42
‫نیوز‬ ‫کوڈ‬: 441029
فونت
حجت الاسلام ڈاکٹر سید شفقت حسین شیرازی :
مجلس وحدت مسلمین پاکستان کے مرکزی سیکرٹری امور خارجہ نے کہا کہ مسئلہ کشمیر کسی ملک کا اندرونی مسئلہ نہیں یہ ایک عالمی مسئلہ بن چکا ہے ۔

رسا نیوز ایجنسی کی رپورٹ کے مطابق مجلس وحدت مسلمین پاکستان کے مرکزی سیکرٹری امور خارجہ حجت الاسلام ڈاکٹر سید شفقت حسین شیرازی نے مقبوضہ کشمیر پر بھارت کی حالیہ جارحیت کی بعد اپنے مذمتی بیان میں کہا کہ کشمیر کے مستقبل کا فیصلہ فقط کشمیری عوام کا حق ہے۔

انہوں نے وضاحت کی ہے کہ بھارت کے ناجائز قبضہ کے بعد اب یہ مسئلہ کشمیر کسی ملک کا اندرونی مسئلہ نہیں یہ ایک عالمی مسئلہ بن چکا ہے جس کو ہندو بنیا مختلف غیر قانونی طریقوں سے دبانے کی مذموم کوشش کر رہا ہے۔ دنیا بھر کے باشعور لوگ اس ناپاک سازش سے آگاہ ہیں اور اپنی بیداری سے مودی سرکار کی ہر سازش کو ناکام بنائیں گے۔

 ان کا کہنا تھا کہ بھارتی وزراء کی جانب سے تحریک پیش کرنا اور حکومت کا مقبوضہ کشمیر سے متعلق اپنے ہی مختلف قانونی آرٹیکلز میں ردو بدل کرنا نہتے کشمیریوں پر کھلا ظلم اور دنیا بھر کے مسلمانوں کو للکارنے کے ساتھ ساتھ عالمی قوانین کی کھلی خلاف ورزی  ہے۔جس کی ہر پہلو سے مذمت کی جاتی ہے۔جہاں اس موقعہ پر کشمیریوں سے اظہار یکجہتی ضروری ہے وہاں حکومت پاکستان کو اپنے ان مظلوم بھائیوں کے لئے واضع پالیسی کا اعلان کر کے ان کی ہر صورت مدد کرنی ہو گی۔

انہوں نے مزید کہاکہ جہاں کشمیریوں سے ہمارا ایمانی رشتہ ہے وہاں قائد اعظم محمد علی جناح کے فرمان کی روشنی میں کشمیر پاکستان کی شہ رگ حیات بھی ہے اور جب کوئی کسی کے رشتہ کو پامال کرنے کی سوچے یا  اسکی شہ رگ کی جانب ہاتھ اٹھائے تو حق بنتا ہے کہ اس ظالم کے ہاتھ توڑ دیئے جائیں۔

انہوں نے بیان کیا کہ میں یقین ہے کہ ہمارے مقتدر ادارے اپنے کشمیری بھائیوں کے لئے کسی بھی حد تک جا سکتے ہیں اس حوالہ سےان کی بھی مدد کرنا ہمارا اخلاقی اور معاشرتی فریضہ ہے۔ سالار وحدت علامہ راجہ ناصر عباس جعفری کے یوم جمعہ کشمیریوں سے اظہار یکجہتی کا اعلان پر دنیا کے مختلف ممالک سےانشاء اللہ بھر پور حمایت کی جائے گی اور مختلف انداز میں اظہار یکجہتی کیا جائے گا۔

تبصرہ بھیجیں
نام:
ایمیل:
* ‫نظریہ‬:
‫برای‬ مہربانی اپنے تبصرے میں اردو میں لکھیں.
‫‫قوانین‬ ‫ملک‬ ‫و‬ ‫مذھب‬ ‫کے‬ ‫خالف‬ ‫اور‬ ‫قوم‬ ‫و‬ ‫اشخاص‬ ‫کی‬ ‫توہین‬ ‫پر‬ ‫مشتمل‬ ‫تبصرے‬ ‫نشر‬ ‫نہیں‬ ‫ہوں‬ ‫گے‬
تازه ترین خبریں
مقبول خبریں