20 August 2019 - 21:52
‫نیوز‬ ‫کوڈ‬: 441103
فونت
آیت اللہ شیخ عیسی قاسم :
بحرینی عالم دین و رہنما نے کہا کہ آمسلمانوں کی فکری ، علمی اور مذہبی مرجعیت اور ان کا اعلی مقام اسی وقت ثابت ہوگا جب وہ اہلبیت اطہار اور آئمہ طاہرین علیھم السلام کی امامت پر استوار ہوگا

رسا نیوز ایجنسی کی رپورٹ کے مطابق شب عید غدیر روضۃ امام رضا علیہ السلام کے ادارہ امور زائرین غیر ایرانی کے زیر اہتمام  ایک جشن حرم مطہر رضوی کے صحن غدیر میں منعقد کیا گیا جس میں عرب زبان زائرین کی کثیر تعداد نے شرکت کی ۔

حرم مطہررضوی میں اس شاندار جشن کو خطاب کرتے ہوئے بحرینی عوام کے مذہبی وسیاسی رہنما آیت اللہ شیخ عیسیٰ قاسم نے اپنی تقریر میں بیان کیا : خداوند متعال نے انسانوں کو کمال و سعادت تک پہنچنے کے لئے خلق کیا ہے اور اس نے کمال و سعادت تک پہنچنے کا واحد راستہ اپنی عبادت و بندگی کو قرار دیا ہے ۔

بحرین کے رہنما نے اس اشارہ کے ساتھ کہ انسانوں کی خلقت سے اللہ کا مقصد ان کی ہدایت اور انہیں کمال تک پہنچانا ہے اور یہ مقصد فقط خداوند متعال کی عبادت کے راستے سے ہی پورا ہوگا تاکید کی : بنیادی طور پر انسانی فطرت یہ ہے کہ وہ خدا کے بارے میں جانے اور معرفت حاصل کرے اس لئے خداوند متعال کی عبادت کا عمل کبھی بھی نہيں رکتا ۔

انہوں نے کہا : نبوت اور امامت ایک ضرورت ہے تاکہ وہ بشریت کو نجات دے سکے اور اس کو منزل کمال تک پہنچائے اس لئے کہ انسانوں کو فقط پیغمبروں اور پھر آئمہ اطہار علیہم السلام کے ذریعہ ہی کمال تک پہنچایا جا سکتا ہے ۔

آیت اللہ شیخ عیسی قاسم نے بیان کیا : پیغمبر گرامی اسلام(ص) کی رحلت کے بعد بہت سارے فرقوں نے یہ دعویٰ کیا کہ حقیقی اسلام کا علم اور اس کی معرفت صرف انہيں حاصل ہے لیکن درحقیقت حقیقی اسلام کو فقط وہی جانتے ہیں جو امامت کے منصب پر فائز ہیں ۔

آیت اللہ شیخ عیسی قاسم نے کہا : اسلام حضرت علی علیہ السلام اور اہلبیت اطہار (ع) کے بغیر مکمل ہوہی نہیں سکتا ؛ اور جو اسلام بشر کی مشکلات کو حل کر سکتا ہے وہ وہی اسلام ہے جو خداوند متعال کی طرف سے آیا ہے اور جسے پیغمبر گرامی اسلام (ص)کو سپرد کیا گیا اور اہلبیت اطہار(ع) نے اسی اسلام کو آگے بڑھایا اس لئے فقط یہی وہ اسلام ہے جس کی بشریت کو ضرورت ہے ۔

انہوں نے اپنے خطاب میں کہا : ہم ایسے علم کی تلاش میں ہیں جو انسانیت کو فراموش نہ کرے اور جو پیغمبر گرامی اسلام(ص) اور اہلبیت اطہار علیہم السلام کے مکتب سے لیا گیا ہو۔

حضرت علی (ع) کا علم و حکمت اعلی ترین فقہی حکم ہے

آیت اللہ شیخ عیسی قاسم نے کہا : جن چند منفرد شخصیات کے وجود مبارک میں مکتب و رسالت الہی متجلی ہوئی اور جو ذوات مقدسہ خداوندعالم تک پہنچنے کاراستہ جانتی ہيں وہ حضرت علی علیہ السلام اور اہلبیت اطہار علیھم السلام کی ذوات گرامی ہیں جو اپنے علم کے ذریعہ انسانی زندگی کو حیات بخشتی ہیں ، شرعی و عبادی احکام کو نافذ کرتی ہیں اور لسان اللہ بن کر گفتگو کرتی ہیں۔

بحرینی عوام کے مذہبی قائد نے کہا  :پیغمبر گرامی اسلام حضرت محمد مصطفیٰ (ص) نے اپنا علم ہرگز کسی کو نہیں دیا سوائے ان شخصیات کے جن کے سینے میں قرآنی علوم پوری طرح موجزن تھے۔ انہوں نے کہا کہ حضرت علی(ع) کا علم و حکمت سب سے اعلی مرتبے پر فائز ہے ، حضرت علی علیہ السلام کی حکمت اور ان کا علم اعلی ترین حکم ہے اور انہوں نے ہی دنیا اور آخرت کا راستہ ہمیں دکھایا ہے ۔


آیت اللہ شیخ عیسیٰ قاسم نے اس بات کا ذکرکرتے ہوئے کہ قرآن کریم انسانوں کو شعور دینے اور ہدایت وراہنمائی کے لئے نازل ہوا ہے تاکہ ان کی مشکلات کو حل کرے کہا کہ کلام الہی نے سینہ پیغمبر پر نازل ہو کر انسانوں کی تمام اصلی ضرورتوں کو پورا کیا ا ور اپنے احکام سے حقیقت کو انسان کے لئے آشکارہ کردیا

انہوں نے بیان کیا : ہم عبد اللہ ابن عباس سے یہ کہہ سکتے ہيں کہ وہ رسول خدا کا سارا علم ہمیں دے دیں ؟ کیا اہلبیت اطہار علیھم السلام کے علاوہ روئے زمین پر ہے کوئی ایسا شخص جو یہ کہہ سکے کہ اس نے رسول اسلام سے براہ راست علم حاصل کیا ہے یا یہ دعوی کرسکے کہ وہ قرآن کےحقیقی معانی کو درک کرتا ہے ؟

رسول اللہ(ص) کے واحد برحق وارث، حضرت علی علیہ السلام ہیں

آيت اللہ شیخ عیسی قاسم نے کہا : پیغمبر گرامی اسلام(ص) کے اصحاب میں تنہا جو ذات قرآن پر کامل تسلط رکھتی ہے اور حضرت رسول اسلام کے علم کی حامل ہے اور پیغمبر اسلام(ص) نے بھی جس کے علم کی شہادت دی اور مؤرخین و اصحاب پیغمبر(ص) نے بھی جس کے علم و کمال اور بہادری کی گواہی دی ہے وہ امیرالمومنین حضرت علی علیہ السلام کی ذات گرامی ہے ۔

بحرینی عوام کے مذہبی رہنما نے بیان کیا : حضرت علی علیہ السلام کے علاوہ کون ہے جو قرآن کی مکمل تفسیر جانتا ہو؟ اور کون ہے جو ان کی بات کو رد کرسکتاہو ؟ انہوں نے کہا کہ حضرت علی علیہ السلام قرآن کی صحیح او ر مکمل تفسیر اور آیات قرآن کریم کے شان نزول کو جانتے ہیں اور فقط حضرت علی علیہ السلام ہی وہ واحد شخص ہیں جو حضرت رسول اللہ(ص) کے تنہا وارث برحق ہیں۔

انہوں نے کہا : سب حضرت علی (ع) کو اچھی طرح جانتے اور پہچانتے تھے اور یہ بھی جانتے تھے کہ حضرت امام علی علیہ السلام ہرگز قرآن سے ہٹ کر کوئی بات نہیں کرتے ، کوئی شخص یہ جرات نہیں کر سکتا تھا کہ وہ حضرت علی علیہ السلام سے یہ کہہ سکے کہ آپ اپنے دعوے میں سچے نہيں ہیں ۔ انہوں نے کہا کہ ان لوگوں میں یہ کیسے جرائت ہوسکتی تھی کہ وہ کہیں علی قرآن کی تفسیرو مفاہیم نہيں جانتے جبکہ خود اہل سنت نے بھی اعتراف کیا ہے کہ علی ہی رسول خدا کے حقیقی وارث ہیں اور قرآن کا حقیقی علم بھی ان کے ہی پاس ہے ۔

روئے زمین پر سب سے بڑا ستم رسول خدا(ص) سے لوگوں کا رابطہ منقطع ہونا ہے

آيت اللہ شیخ عیسی قائد نے اس بات پر زو ردیتے ہوئے کہ حضرت علی علیہ السلام انسانوں کی دنیا و آخرت کے ضامن ہيں کہا : پیغبران ا لہی اور آئمہ اطہار علیھم السلام کی بڑی ذمہ داری لوگوں کو تاریکیوں سے نجات دلانا اور نور کی جانب ان کی رہنمائی کرنا تھی تاکہ انسان الہی کمال تک پہنچ سکے

انہوں نے بیان کیا : روئے زمین پر سب سے بڑا ظلم و ستم یہ ہے کہ انسان اپنا رابطہ رسول خدا(ص) سے منقطع کر لے اور امت اسلامیہ کو اس نعمت سے محروم کر دے اگر تمام مسلمان غور و فکر کریں تو متوجہ ہوں گے کہ امامت کو چھوڑنے سے انسان اصلی اسلام سے محروم اور الہیٰ دین سے دور ہو جاتا ہے ۔

بحرین کی اسلامی انقلابی تحریک کے قائد نے کہا : خداوند متعال نے علی علیہ السلام کو رسول خدا کا خلیفہ بلا فصل مقرر کرنے اورلوگوں سے حضرت علی علیہ السلام کی بیعت کروانے کے بعد دین کو کامل کر دیا اور درحقیقت تمام الہی نعمتیں یہی ہیں اور ان کے بغیر ہر نعمت ناقص ہے۔

انہوں نے اس بات کا ذکرکرتے ہوئے کہ اگر نماز و حج ترک کر دیئے جائیں تو تمام واجبات ترک ہو جاتے ہیں کہا کہ اسی طرح اگر امامت نہ ہو تی تو اسلام میں سبھی سیاسی نظام اور انسانیت تباہ ہوجاتی ۔ انہوں نے کہا کہ جب لوگ رسالت کے بتائے ہوئے راستے پر چلیں گے تو اپنے مقصد تک پہنچ جائيں گے ۔

آیت اللہ شیخ عیسیٰ قاسم نے کہا : قرآنی احکام کی پیروی کے بغیر نہ تو عزت باقی رہتی ہے، نہ ہی مشکلات حل ہوتی ہیں اور نہ ہی انسان اپنے ہدف و مقصد تک پہنچ سکتا ہے اور جب قرآنی احکامات نافذ ہوجائيں گے تو منجی عالم بشریت حضرت مہدی موعود عج اللہ تعالی فرجہ الشریف بھی ظہور فرمائيں گے اور قیام کریں گے .

تبصرہ بھیجیں
نام:
ایمیل:
* ‫نظریہ‬:
‫برای‬ مہربانی اپنے تبصرے میں اردو میں لکھیں.
‫‫قوانین‬ ‫ملک‬ ‫و‬ ‫مذھب‬ ‫کے‬ ‫خالف‬ ‫اور‬ ‫قوم‬ ‫و‬ ‫اشخاص‬ ‫کی‬ ‫توہین‬ ‫پر‬ ‫مشتمل‬ ‫تبصرے‬ ‫نشر‬ ‫نہیں‬ ‫ہوں‬ ‫گے‬
تازه ترین خبریں
مقبول خبریں