26 October 2010 - 13:30
‫نیوز‬ ‫کوڈ‬: 2004
فونت
قائد انقلاب اسلامي:
رسا نيوزايجنسي - قائد انقلاب اسلامي نے قم ميں ممتاز طلبہ، اساتذہ اور علمائے کرام کے اجتماع سے خطاب ميں علم کو ديني مدارس کي حقيقي ماہيت و شناخت بيان کيا ?
قائد انقلاب اسلامي

رسا نيوزايجنسي کي رھبر معظم کي خبر رساں سائٹ سے منقولہ رپورٹ کے مطابق ، قائد انقلاب اسلامي آيت اللہ العظمي سيد علي خامنہ اي نے اتوار کي شب قم کے ديني علوم کے مرکز سے تعلق رکھنے والے ممتاز طلبہ اور اساتذہ و علمائے کرام کے اجتماع ميں علم کو ديني مدارس کي حقيقي ماہيت و شناخت قرار ديا اور اس علمي ڈھانچے کي عملي پابندي کے لوازمات کي جانب اشارہ کرتے ہوئے سوالات و اشکالات کي خندہ پيشاني سے پذيرائي، رجعت پسندي سے دوري اور روشن خيالي، علمي خود اعتمادي، مخالف نظريات کے جواب ميں منطقي اور دانشمندانہ طرز عمل، ديني مدارس کے لئے متعدد موضوعات، اخلاقياتي نظام نيز دشمن کي شناخت کي ضرورت سے متعلق انتہائي اہم نکات بيان کئے?

چار گھنٹے سے زيادہ دير تک چلنے والي اس نشست ميں قائد انقلاب اسلامي نے علم و دانش کو ديني مدارس کا اصلي ستون قرار ديا اور فرمايا : ديني علوم کے مرکز کي بنياديں علم و دانش پر استوار ہيں لہذا اس مرکز کو چاہئے کہ "علم کي مرکزيت" کے تقاضے پورے کريں?

قائد انقلاب اسلامي نے سوالات اور اشکالات کے جوابات خندہ روئي کے ساتھ دئے جانے کو علمي شناخت کے تئيں ديني مدارس کي مکمل پابندي کا تقاضہ قرار ديا اور فرمايا : علم سوالات کو جنم ديتا ہے لہذا علمي مراکز منجملہ ديني مدارس کو چاہئے کہ خندہ پيشاني کے ساتھ سوالات اور ابہامات کے جواب پيش کريں?

قائد انقلاب اسلامي نے ديني علوم کے مراکز ميں علمي مجادلوں اور مناظروں کي طويل تاريخ کي جانب اشارہ کرتے ہوئے فرمايا : يہ بہترين روش ديني علوم کے مرکز ميں دوسرے تمام موضوعات کے سلسلے ميں بھي اختيار کي جاني چاہئے?

قائد انقلاب اسلامي کے بقول سوالات کے سلسلے کا منقطع ہونا علم و دانش کے سلسلے کے منقطع ہو جانے کا باعث ہے، آپ نے فرمايا : سوالات کرنا اور نئي روش پر عمل نيز مسئلے کو پيش کرنا کوئي حرج کي بات نہيں ہے اور جو بات اٹھائي جا رہي ہے اگر غلط بھي ہو تو اس کا علمي روش کے مطابق جواب دينا چاہئے?

قائد انقلاب اسلامي نے آزاد خيالي اور فکري آزادي کو ديني علوم کے مراکز کي ايک اور اہم خصوصيت قرار ديا اور اس اچھي روش کي اور زيادہ ترويج کي ضرورت پر زور ديتے ہوئے فرمايا : آزاد خيالي علم دوست ہونے کي علامت ہے اور علم کے ميدان ميں رجعت پسندي لا يعني شئے ہے?

قائد انقلاب اسلامي آيت اللہ العظمي خامنہ اي نے اس صورت حال کے باوجود ديني علوم کے مرکز ميں تنقيد کي آزادي کے فقدان کي باتوں کو بے بنياد تہمت قرار ديا اور فرمايا : ديني علوم کے مرکز ميں اس وقت پائي جانے والي اظہار خيال کي آزادي ماضي سے کہيں زيادہ ہے اور اس آزادي کو مختلف سطح پر پھيلايا جائے اور اہل نظر حضرات تمام موضوعات کے سلسلے ميں اپنے گوناگوں افکار و نظريات پوري آزادي کے ساتھ بيان کريں?

قائد انقلاب اسلامي نے علمي خود اعتمادي کو ديني علوم کے مرکز کے علمي تشخص کا ايک اور لازمہ قرار ديا اور فرمايا : افکار و نظريات کے ٹکراؤ کي صورت ميں ديني علوم کے مرکز ميں "علم و دانش" کو سب سے اہم کسوٹي قرار ديا جائے، بيشک تقوا و پرہيزگاري اور خضوع و خشوع کا شمار اعلي اقدار ميں ہوتا ہے ليکن علم کو کسوٹي کا درجہ حاصل ہے اور اس نقطہ نگاہ سے ديني علوم کے مرکز ميں ان افراد کي اہميت سب سے زيادہ ہونا چاہئے، جن کا علم سب سے زيادہ ہے?

قائد انقلاب اسلامي نے علمي اخلاق کے باب ميں فرمايا : علمي انصاف اور علمي کاموں ميں پوري سنجيدگي و متانت ضروري ہے، استاد کو چاہئے کہ مطالعے اور غور و خوض کے ذريعے نئے علمي نظريات پيش کرے تاکہ ديني علوم کا مرکز عصري تعليمي نظام کي مصيبتوں ميں مبتلا نہ ہو?

قائد انقلاب اسلامي نے ديني علوم کے مرکز کي علمي ساخت کے تحفظ کے لئے علمي طبقے سے قومي اور بيروني دونوں سطح پر فعال رابطے کي ضرورت پر زور ديا اور فرمايا : قم کے ديني علوم کے مرکز کا ملک کے ديگر ديني علمي مراکز اور يونيورسٹيوں، اسي طرح عالم اسلام کے ديني تعليمي مراکز سے منظم علمي رابطہ ہونا چاہئے اور جديد مواصلاتي ذرائع کا استعمال اس رابطے کو آسان بنا سکتا ہے?

قائد انقلاب اسلامي نے مخالف نظريات کو کچل دينے سے اجتناب کو بھي ديني علوم کے مرکز کي ايک اہم خصوصيت قرار ديا اور فرمايا : ديني علوم کے مرکز ميں کبھي بھي مخالف نظريات کے جواب ميں غير علمي روش اختيار نہيں کي جاني چاہئے?

آپ نے علمي استدلال اور اطمينان بخش دلائل کو ديني علوم کے مرکز کي علمي روش کي بنياد قرار ديا اور بات بات پر دوسروں کے کفر کے فتوے دينے کو غير عالمانہ روش بتايا،
آپ نے فرمايا : غلط نظريات کا جواب پوري مضبوطي سے ليکن دلائل کے آئينے ميں ديا جانا چاہئے?

قائد انقلاب اسلامي نے علمي تشخص کي پابندي کي ايک اور شرط کے طور پر مطالعے اور تحقيق پر مبني تعليم کا ذکر کيا اور فرمايا : ديني علوم کے مرکز کے اساتذہ کو چاہئے کہ شروع سے ہي مطالعے، تفکر و تدبر اور تحقيق کي بنياد پر طلبہ کي تربيت کريں?

آپ نے ديني علوم کے مرکز ميں تحقيق کو مطالعے کي مرکزيت کي ضرورت پر زور ديا اور فلسفے سميت مختلف علوم پر ملکہ کو ديني علوم کے مرکز کي اہم احتياج قرار ديا?
آپ نے فرمايہ : فقہ ديني علوم کے مرکز کے لئے ريڑھ کي ہڈي کا درجہ رکھتي ہے ليکن ان مراکز کو چاہئے کہ علوم کي درجہ بندي کرکے تفسير، فن تبليغ اور ہيومن سائنسز کي مہارت بھي اپنے طلبہ ميں پيدا کريں?

قائد انقلاب اسلامي نے تعليم و تربيت کے سلسلے ميں نئي روشوں کے استعمال اور نئے علوم کي پيدوار پر زور ديا اور اخلاق و تربيت کے نظام کي اہميت پر زور ديتے ہوئے فرمايا : ديني علوم کو چاہئے کہ باہري ماحول بالخصوص تعليم و تربيت کے وسيع و عريض ميدان ميں زيادہ سرگرم کردار ادا کرے? آپ نے اس ہدف کي تکميل کے لئے تعليم و تربيت اور اخلاقيات کے موضوع ميں مہارت رکھنے والے افراد کي ضرورت پر زور ديا اور ديني علوم کے مرکز کے ذمہ داران سے سفارش کي کہ اس ضرورت پر پوري توجہ ديں?

قائد انقلاب اسلامي نے داخلي اور بيروني رائے عامہ پر اثر انداز ہونے والے جديد وسائل اور نئے موضوعات کا ذکر کرتے ہوئے فرمايا : گوناگوں شبہات اور سوالات کے پيدا ہونے کے امکانات کے باعث ديني علوم کے مرکز کي ذمہ دارياں بہت زيادہ اور جديد اور گوناگوں موضوعات پر ديني علوم کے مرکز کي توجہ کي ضرورت انتہائي اہم ہو گئي ہے لہذا اس کے لئے ضروري منصوبہ بندي کي جاني چاہئے?

آپ نے با استعداد اور دلچسپي رکھنے والے افراد کو زيادہ تعداد ميں ديني علوم کے مرکز ميں لانے کا مشورہ ديا اور قم کے ديني علوم کے مرکز ميں انجام پانے والے اہم اقدامات کي جانب اشارہ کرتے ہوئے فرمايا : موجودہ اطمينان بخش انتظاميہ جسے مراجع تقليد کي تائيد بھي حاصل ہے ان اہم اقدامات کي انجام دہي ميں پوري طرح کامياب رہي ہے?

قائد انقلاب اسلامي نے ديني علوم کے مرکز کي انتظاميہ اور سپريم کونسل کو کمزور کرنے والے اقدامات سے اجتناب کرنے کي ہدايت کي اور فرمايا : سب اس کا خيال رکھيں کہ مدرسين کونسل جيسے پرانے ادارے کمزور نہ ہونے پائيں?

قائد انقلاب اسلامي نے دين اور دينداري کي تبليغ و ترويج سے استکبار بالخصوص امريکا اور صيہونزم کي دشمني کي جانب اشارہ کرتے ہوئے فرمايا : گستاخانہ کارٹونوں کي اشاعت اور قرآن سوزي جيسي سازشيں اور عالمي صيہوني نيٹ ورک کے ديگر اقدامات دشمنان اسلام کي خباثتوں کے غماز ہيں لہذا انہيں معمولي نہيں سمجھنا چاہئے?

آپ نے فرمايا : ديني علوم کا مرکز فطري بات ہے کہ ان مخاصمانہ حرکتوں پر خاموش نہيں رہ سکتا بلکہ سامراج کي ان سرگرميوں کے خلاف پوري ہوشياري سے اپنے موقف کا اعلان کرے گا?

قائد انقلاب اسلامي نے دشمن کي مکمل شناخت اور اس کے اہداف کي تکميل کي راہ پر چلنے سے اجتناب کو ضروري قرار ديا اور فرمايا : ديني مدارس سے تعلق رکھنے والے افراد سميت پورے معاشرے کو چاہئے کہ ان کا کوئي ايک فعل بھي دشمنوں کي پسند کے مطابق انجام نہ پائے?

قائد انقلاب اسلامي نے روحانيت، پرہيزگاري، مال دنيا سے بے رغبتي، توسل و تضرع کو ديني علوم کے مرکز کي فعاليت و خدمات کي بنياد و اساس قرار ديا اور فرمايا : اگر علمي و عقلي امور کي انجام دہي کے تمام تر وسائل فراہم ہوں ليکن روحانيت و اخلاقيات کا غلبہ نہ ہو تو کام صحيح طور پر انجام نہيں پاتے?

قائد انقلاب اسلامي نے امام خميني رحمت اللہ عليہ اور ديگر بزرگ علمائے کرام اور اساتيد عظام کي طلبہ کو اخلاقيات کي پابندي کي نصحيتوں کا حوالہ ديا اور فرمايا : نوجوانوں کے دل نصيحتوں سے بہرہ مند ہونے اور بلند معنوي درجات تک پہنچنے کے لئے آمادہ ہوتے ہيں چنانچہ اس زمين سے استفادہ کرتے ہوئے طلبہ کو آخرت کے بارے ميں تدبر و تفکر اور خالص الہي نيت کے ساتھ تحصيل علم کي دعوت ديني چاہئے? قائد انقلاب اسلامي نے ديني علوم کے مرکز کے منتخب اساتذہ اور طلبہ سے اپني ملاقات کو يادگار، انتہائي مفيد اور لذت بخش قرار ديا اور فرمايا کہ تمام اساتذہ نے بڑي اچھي پرکشش اور نپي تلي گفتگو کي?

آپ نے فرمايا : منصوبوں ميں حقائق و حالات پر پوري توجہ رکھنا چاہئے تاکہ انہيں عملي جامہ پہنانا آسان ہو اور اچھي باتيں تمنا کي حدوں تک ہي محدود نہ رہ جائيں?

اس ملاقات ميں قائد انقلاب اسلامي کے خطاب سے قبل ديني علوم کے مرکز کے معروف اساتذہ نے مختلف فقہي، فلسفيانہ، سماجي و ثقافتي امور کے بارے ميں اہم تجاويز پيش کيں?
تبصرہ بھیجیں
نام:
ایمیل:
* ‫نظریہ‬:
‫برای‬ مہربانی اپنے تبصرے میں اردو میں لکھیں.
‫‫قوانین‬ ‫ملک‬ ‫و‬ ‫مذھب‬ ‫کے‬ ‫خالف‬ ‫اور‬ ‫قوم‬ ‫و‬ ‫اشخاص‬ ‫کی‬ ‫توہین‬ ‫پر‬ ‫مشتمل‬ ‫تبصرے‬ ‫نشر‬ ‫نہیں‬ ‫ہوں‬ ‫گے‬
تازه ترین خبریں
مقبول خبریں