17 September 2009 - 14:13
‫نیوز‬ ‫کوڈ‬: 288
فونت
دفتررهبرمعظم میں هلال کمیٹی کے رکن:
رسا نیوز ایجنسی - دفتررهبرمعظم میں هلال کمیٹی کے رکن نے کہا: نجومی حوالے سے سنیچر کے دن رؤیت هلال کی بہت کم امید ہے.
شواهد امسال ماه رمضان کے 30 دن کے ہونے کی خبر دیتے ہیں


حجت‌الاسلام علیرضا موحدنژاد، دفتررهبرمعظم میں هلال کمیٹی کے رکن نے رسا نیوزایجنسی کے رپورٹر سے انٹرویو میں کہا: رؤیت هلال کے لئے پچاس سے زیادہ گروپ تشکیل دئے گئے ہیں ، انہیں سنیچر کے دن ملک کے مختلف علاقوں میںبھجا جائے گا 

انہوں نے مزید کہا : رؤیت هلال کا گروپ ھر صوبہ میں مستقر ہوگا اورتھران میں بھی مستقل طور پر گروپ اپنی  کارکردگی انجام دے گا

دفتررهبرمعظم میں هلال کمیٹی کے رکن نے یہ اظھار کرتے ہوئے کہ غروب شنبہ کو رؤیت هلال کی بہت کم امید ہے کہا : ھمارےبعض ماھرین کا کہنا ہے کہ ھلال قابل رؤیت ہےاور بعض دیگر ماھرین کہتے ہیں کہ قابل رؤیت نہی ہے اس حوالےھلال رؤیت اور عدم رؤیت کی حد پر ہے
 
حجت‌الاسلام موحدنژاد نےیہ بیان کرتے ہوئے کہ ھم کوشش میں ہیں لوگوں کو جلد ازجلدنتیجہ سے اگاہ کرسکیں کہا: بہر حال اگر سنیچر کے دن چاند دیکھا گیا تو اتوارکو ، وگرنہ سوموار عید فطر ، شوال کی پہلی ہوگی

انہوںنے رؤیت هلال میں فضاء کی صورت حال کے اساسی نقش ایفا کرے کی جانب  اشارہ کرتے ہوئے کہا امسال گرمیوں میں بارش نہ ہونے کی بناء پر فضائی کی صورت حال مناسب نہی ہے لھذا سنیچر کے دن رؤیت هلال میں دشواری کا سامنا ہے اس لحاظ سے ممکن ہے سنیچر کے دن چاند نہ دیکھا جاسکے 
 
دفتررهبرمعظم میں هلال کمیٹی کے رکن نے ملک کےجنوبی علاقہ جات کو رؤیت هلال کے لئے بہترین علاقہ بیان کیا اور کہا : جنوبی علاقہ جات میں چاند کی بلندی زیادہ ہوتی ہے اورسورج ڈوبنے کے11 منٹ بعد چاند ڈوبتا ہے   


حجت‌الاسلام علیرضا موحدنژاد، دفتررهبرمعظم میں هلال کمیٹی کے رکن نے رسا نیوزایجنسی کے رپورٹر سے انٹرویو میں بیان کرتے ہوئے کہا: رؤیت هلال کے لئے پچاس سے زیادہ گروپ تشکیل دئے گئے ہیں ، انہیں شنبہ کے دن ملک کے مختلف علاقوں میںبھجا جائے گا  .

انہوں نے مزید کہا : رؤیت هلال کا گروپ ھر صوبہ میں مستقر ہوگا اورتھران میں بھی مستقل طور پر گروپ اپنی  کارکردگی انجام دے گا.

دفتررهبرمعظم میں هلال کمیٹی کے رکن نے یہ اظھار کرتے ہوئے کہ غروب شنبہ کو رؤیت هلال کی بہت کم امید ہے کہا : ھمارےبعض ماھرین کا کہنا ہے کہ ھلال قابل رؤیت ہےاور بعض دیگر ماھرین کہتے ہیں کہ قابل رؤیت نہی ہے اس حوالےھلال رؤیت اور عدم رؤیت کی حد پر ہے .


تبصرہ بھیجیں
نام:
ایمیل:
* ‫نظریہ‬:
‫برای‬ مہربانی اپنے تبصرے میں اردو میں لکھیں.
‫‫قوانین‬ ‫ملک‬ ‫و‬ ‫مذھب‬ ‫کے‬ ‫خالف‬ ‫اور‬ ‫قوم‬ ‫و‬ ‫اشخاص‬ ‫کی‬ ‫توہین‬ ‫پر‬ ‫مشتمل‬ ‫تبصرے‬ ‫نشر‬ ‫نہیں‬ ‫ہوں‬ ‫گے‬