26 January 2013 - 18:08
‫نیوز‬ ‫کوڈ‬: 5042
فونت
حجت الاسلام سيد ساجد علي نقوي:
رسا نيوزايجنسي – شيعہ علما کونسل کے سربراہ حجت الاسلام سيد ساجد علي نقوي نے آئين و قانون کے مطابق قائم ہونے والي ھر حکومت کي حمايت کا اعلان کيا ?
حجت الاسلام سيد ساجد علي نقوي

رسا نيوزايجنسي کي رپورٹ کے مطابق، شيعہ علما کونسل کے سربراہ اور ملي يکجہتي کونسل کے نائب صدر حجت الاسلام سيد ساجد علي نقوي کے دفتر پاکستان سے ارسال کردہ بيان ميں تاکيد کي گئي : حکومت آئين و قانون کے مطابق ہوگي تو حمايت کي جائے گي ?

اس بيان کا تفصيلي متن مندرجہ ذيل ہے :

نگران وزير اعظم اور حزب اختلاف سميت کسي بھي جماعت نے نہ ہم سے رابطہ کيا اور نہ ہي مشاورت کي گئي، نگران حکومت آئين و قانون کے مطابق ہوگي تو ھم حمايت کريں گے، موجودہ حالات کو ديکھتے ہوئے ايسا نگران وزير اعظم لايا جائے جس پر پاکستان کي اکثريت کا اعتماد ہو اور آنے والا نگران وزير اعظم ايسي صلاحيتوں کا حامل شخص ہونا چاہئے جو موجودہ ملکي صورت حال سے نبرد آزما بھي ہوسکے ، تحريک جعفريہ قومي پليٹ فارم ہے جس ميں دھڑے بندي کي بات درست نہيں اس طرح کي افواہوں ميں کوئي صداقت نہيں ہے ?

انہوں نے تاکيد کي : تحريک جعفريہ ملي پليٹ فارم ہے اور اس ميں کوئي دھڑے بندي نہيں اس طرح کي خبروں يا افواہوں کي سختي سے ترديد کرتے ہيں ، البتہ بعض تنظيميں يا گروہ مختلف ناموں سے کام کررہے ہيں ?

انہوں نے مزيد کہا: موجودہ حالات ميں نگران وزير اعظم ايسا لايا جائے جس پر پاکستان کي اکثريت کا اعتماد ہو اور وہ ايسي صلاحيتوں کا حامل ہو جس سے موجودہ ملکي صورتحال سے نبرد آزماد بھي ہوسکے ، نگران سيٹ اپ کے حوالے سے تحريک جعفريہ سے حزب اختلاف سميت کسي بھي سياسي جماعت کا نگران وزير اعظم يا نگران حکومت کے قيام بارے کوئي رابطہ نہيں ہوا اورنہ ہي مشاورت کي گئي ہے اس طرح کي خبروں يا بيانات ميں کوئي صداقت نہيں ہے?
تبصرہ بھیجیں
نام:
ایمیل:
* ‫نظریہ‬:
‫برای‬ مہربانی اپنے تبصرے میں اردو میں لکھیں.
‫‫قوانین‬ ‫ملک‬ ‫و‬ ‫مذھب‬ ‫کے‬ ‫خالف‬ ‫اور‬ ‫قوم‬ ‫و‬ ‫اشخاص‬ ‫کی‬ ‫توہین‬ ‫پر‬ ‫مشتمل‬ ‫تبصرے‬ ‫نشر‬ ‫نہیں‬ ‫ہوں‬ ‫گے‬