02 February 2010 - 15:02
‫نیوز‬ ‫کوڈ‬: 900
فونت
مولانا عون نقوي پاکستان :
رسا نيوزايجنسي - مولانا عون نقوي نے بغير قانوني گرفتاريوں کےبند کئے جانے کا مطالبہ کيا .
کراچي

 

رسا نيوزايجنسي کي رپورٹ کے مطابق ، ادارہ تبليغ تعليمات اسلامي کے سربراہ جعفريہ الائنس کي سپريم کونسل کے سينئر رکن مولانا سيد محمد عون نقوي نے بارگاہ حسيني پي اي سي ايچ ايس ميں خطاب کرتے ہوئے کہا : سانحہ عاشورہ کو سرد خانے ميں نہ ڈالا جائے.


اسلامي نظرياتي کونسل ميں نمائندگي دي جائے? وفاقي شريعت عدالت ميں شيعہ جج تعينات کيا جائے.


رويت ہلال کميٹي ميں شيعہ تين سال کيلئے متعين کيا جائے، وزارت مذہبي امور ميں شيعہ چيئر بحال کي جائے ، شيعہ حجاج کي اضافي رقوم واپس دلائي جائيں سانحہ کراچي کے نام پر بلاجواز گرفتارياں بند کي جائيں.


علامہ عون نقوي نے کہا : عاشورہ سے اب تک سيکڑوں نوجوانوں کو گرفتار کرنا ظلم و زيادتي ہے.چھاپے مارنا اور خواتين کي بے حرمتي کرنا اشتعال دلانے کے مترادف ہے.

اس موقع پر شبر رضا، علي مہدي زيدي اور فرحان نے بھي خطاب کيا اور سانحہ کراچي ميں شہيد ہونے والوں کے ورثاء سے ہمدردي اور جلاؤ گھيراؤ کي مذمت کي .
  

تبصرہ بھیجیں
نام:
ایمیل:
* ‫نظریہ‬:
‫برای‬ مہربانی اپنے تبصرے میں اردو میں لکھیں.
‫‫قوانین‬ ‫ملک‬ ‫و‬ ‫مذھب‬ ‫کے‬ ‫خالف‬ ‫اور‬ ‫قوم‬ ‫و‬ ‫اشخاص‬ ‫کی‬ ‫توہین‬ ‫پر‬ ‫مشتمل‬ ‫تبصرے‬ ‫نشر‬ ‫نہیں‬ ‫ہوں‬ ‫گے‬