‫‫کیٹیگری‬ :
28 October 2016 - 09:17
‫نیوز‬ ‫کوڈ‬: 424105
فونت
بغداد یونیورسٹی کے الحکیم ہال میں پانچواں سالانہ عاشوراء کانفرنس میں سانحہ کربلا کے مختلف پہلوؤں پر روشنی ڈالی گئی اور شہداء کربلا کو ان کی عظیم قربانیوں پہ خراجِ عقیدت پیش کیا گیا۔
عاشورہ کانفرنس بغداد

رسا نیوز ایجنسی کی رپورٹ کے مطابق روضہ مبارک حضرت عباس علیہ السلام کے یونیورسٹی تعلقات کے شعبہ نے نوجوانوں اور طلاب کی تعلیم و تربیت کے لیے شروع کیے جانے والے فتیة الکفیل الوطنی پروگرام کے ضمن میں بغداد یونیورسٹی کے الحکیم ہال میں پانچواں سالانہ عاشوراء سیمینار کا انعقاد کیا ۔

موصولہ رپورٹ کے مطابق اس کانفرنس میں سانحہ کربلا کے مختلف پہلوؤں پر روشنی ڈالی گئی اور شہداء کربلا کو ان کی عظیم قربانیوں پہ خراجِ عقیدت پیش کیا گیا۔

امام حسین علیہ السلام کی شہادت اور انقلاب کربلا کی یاد میں منعقد ہونے والے عاشوراء کانفرنس کا آغاز تلاوت قرآن مجید اور شھداء کے لیے فاتحہ خوانی سے ہوا ، تلاوت کے بعد عراق کا قومی ترانہ اور روضہ مبارک حضرت عباس علیہ السلام کا مخصوص ترانہ پڑھا گیا۔

اس کے بعد بغداد یونیورسٹی کے چانسلر الدكتور علاء عبد الحسین الكیشوان نے خطاب کیا اور اپنے خطاب میں کہا: آج ہم امام حسین علیہ السلام کی شہادت کی یاد منانے کے لیے پانچویں سالانہ عاشوراء کانفرنس میں یہاں جمع ہوئے ہیں۔

انہوں نے بیان کیا : امام حسین علیہ السلام اپنی شھادت سے لے کر آج تک زندہ ہیں اور اسلام اور انسانیت کی تمام اقدار کی نمائندگی کر رہے ہیں امام حسین علیہ السلام اپنے مبارک انقلاب کے ذریعے سے ہمیشہ ہر زمانے میں زندہ رہیں گے۔ امام حسین علیہ السلام شجاعت، فداکاری اور محمدی رسالت کے لیے اخلاص کا عظیم ترین پیکر و نمونہ ہیں۔

علاء عبد الحسین الكیشوان نے کہا : امام حسین علیہ السلام ایسی درسگاہ ہیں کہ جہاں سے ہمیں ہر طرح کی رہنمائی اور اعلی ترین اصول میسسر ہوتے ہیں کیونکہ امام حسین علیہ السلام ہی ہر زمانے کے لیے اپنے جد امجد رسول اكرم صلى الله علیہ و آلہ و سلم کی حقیقی درسگاہ ہیں۔

انہوں نے بیان کیا : امام حسین علیہ السلام انقلاب کا ایسا فلسفہ ہیں جس کے ہمیشہ باقی رہنے کی گواہی تاریخ انسانی دیتی ہے، امام حسین علیہ السلام کے اصول پوری دنیا میں امن و حریت کی بنیاد شمار ہوتے ہیں کیونکہ امام(ع) کا قیام پوری انسانیت میں عدل و انصاف کا نظام رائج کرنے، ہر معاشرے میں امن و امان اور مل جل کر رہنے اور تمام مظلوم انسانوں کے دفاع کے لیے اعلی ترین اصولوں پر مشتمل ہے۔

اس کے بعد روضہ مبارک حضرت عباس علیہ السلام کے ڈپٹی سیکرٹری بشیر محمد جاسم نے خطاب کیا اور امام حسین علیہ السلام کے قیام، امام مہدی عجل اللہ فرجہ کے ظہور اور ہماری ذمہ داریوں کے بارے میں گفتگو کی اور موجودہ دہشت گردوں اور داعش کو یزیدیت کی جدید شکل قرار دیا۔/۹۸۹/ف۹۳۰/ک۴۷۴/

تبصرہ بھیجیں
نام:
ایمیل:
* ‫نظریہ‬:
‫برای‬ مہربانی اپنے تبصرے میں اردو میں لکھیں.
‫‫قوانین‬ ‫ملک‬ ‫و‬ ‫مذھب‬ ‫کے‬ ‫خالف‬ ‫اور‬ ‫قوم‬ ‫و‬ ‫اشخاص‬ ‫کی‬ ‫توہین‬ ‫پر‬ ‫مشتمل‬ ‫تبصرے‬ ‫نشر‬ ‫نہیں‬ ‫ہوں‬ ‫گے‬