‫‫کیٹیگری‬ :
12 September 2017 - 22:24
‫نیوز‬ ‫کوڈ‬: 429921
فونت
قائد انقلاب اسلامی:
رہبر معظم انقلاب اسلامی نے کہا : اسلامی ممالک کا عملی اقدام میانمار کے مسئلے کا حل ہے ۔
قائد انقلاب اسلامی

رسا نیوز ایجنسی کی رپورٹ کے مطابق رہبرمعظم انقلاب اسلامی حضرت آیت اللہ العظمی سید علی خامنہ ای نے آج صبح  اپنے درس خارج میں میانمار میں رونما ہونے والے انسانی المیے پرعالمی اداروں اور انسانی حقوق کے دعویداروں کی خاموشی پر کڑی نکتہ چینی کرتے ہوئے تاکید کی کہ اس مسئلے کی راہ حل  میانمار کی بے رحم حکومت پر سیاسی اوراقتصادی دباؤ ڈالنے میں ہے۔

رہبرمعظم انقلاب اسلامی نے فرمایا کہ اسلامی ممالک کے حکمرانوں کو عملی اقدامات اٹھانے کی ضرورت ہے تاہم عملی اقدامات سے مراد فوج یا فورسز بھیجنا نہیں بلکہ میانمار پر سیاسی، اقتصادی اور تجارتی دباو ڈالنا ہے اور میانمار کے مظالم کے خلاف عالمی فورمز پر آواز بلند کرنا ہے۔

حضرت آیت اللہ العظمی سید علی خامنہ ای نے میانمار میں مسلمانوں کے خلاف ڈھائے گئے مظالم کے حوالے سے اسلامی تعاون تنظیم کےغیرمعمولی اجلاس بلانے پر تاکید کی اورفرمایا کہ آج کی دنیا ظلم و ستم کی دنیا ہے اورظلم سے بھری دنیا میں ایران اپنا مؤقف فخر کے ساتھ بیان کرتا ہے اور ایران اپنے اس فخر کو جاری رکھے کہ وہ دنیا کے مظلوموں کی حمایت کرتا ہے چاہے وہ مقبوضہ فلسطین میں صیہونیوں کی جانب سے ہو چاہے وہ یمن، بحرین، میانمار یا کسی اورجگہ پرہو۔

رہبرمعظم انقلاب اسلامی نے فرمایا کہ میانمار میں تشدد کے واقعات کو مسلمان اور بدھ مت کی لڑائی قرار دینے کا تاثرغلط ہے البتہ ممکن ہے کہ اس لڑائی میں مذہبی تعصب بھی کارفرما ہو لیکن حقیقت میں یہ مسئلہ ایک سیاسی مسئلہ ہے کیونکہ اس مسئلہ میں میانمار کی حکومت خود ملوث ہے اور اس حکومت کی سربراہ بھی ایک ایسی بے رحم عورت ہے جس نے امن کا نوبل انعام لے رکھا ہے اوراس طرح  امن کے نوبل انعام کی حقیقت بھی ختم ہوگئی ہے۔ در حقیقت اس نے نوبل انعام کا جنازہ نکال دیا ہے۔

 حضرت آیت اللہ العظمی سید علی خامنہ ای نے اقوام متحدہ کے سیکرٹری جنرل کی جانب سے میانمار کے واقعات کی محض مذمت کرنے پر تنقید کرتے ہوئے فرمایا کہ انسانی حقوق کے نام نہاد دعویدار مخصوص ممالک میں تو ایک مجرم کو سزا دلوانے کے لئے بہت شور شرابا کرتے ہیں مگر وہ میانمار میں ہزاروں افراد کے قتل عام اورآوارہ وطن ہونے پرخاموش ہیں۔

قائد انقلاب اسلامی نے فرمایا کہ اس لئے اسلامی ممالک کے حکمرانوں کو عملی اقدامات اٹھانے کی ضرورت ہے تاہم عملی اقدامات سے مراد فوج یا فورسز بھیجنا نہیں بلکہ میارنمار پر سیاسی، اقتصادی اور تجارتی دباو ڈالنا ہے اور میانمار کے مظالم کے خلاف عالمی فورمز میں آواز بلند کرنا ہے۔

انہوں نے میانمار میں مسلمانوں کے خلاف مظالم کے حوالے سے اسلامی تعاون تنظیم کے غیرمعمولی اجلاس بلانے پر زور دیا۔

سپریم لیڈر نے مزید فرمایا کہ آج کی دنیا ظلم و ستم کی دنیا ہے اور ایران کو چاہئے اپنے اس فخر کو جاری رکھے کہ وہ دنیا کے مظلوموں کی حمایت کرتا ہے چاہئے وہ مقبوضہ فلسطین، یمن، بحرین، میانمار یا کوئی اور جگہ ہو۔/۹۸۹/ف۹۴۰/

تبصرہ بھیجیں
نام:
ایمیل:
* ‫نظریہ‬:
‫برای‬ مہربانی اپنے تبصرے میں اردو میں لکھیں.
‫‫قوانین‬ ‫ملک‬ ‫و‬ ‫مذھب‬ ‫کے‬ ‫خالف‬ ‫اور‬ ‫قوم‬ ‫و‬ ‫اشخاص‬ ‫کی‬ ‫توہین‬ ‫پر‬ ‫مشتمل‬ ‫تبصرے‬ ‫نشر‬ ‫نہیں‬ ‫ہوں‬ ‫گے‬