‫‫کیٹیگری‬ :
03 September 2016 - 20:00
‫نیوز‬ ‫کوڈ‬: 422999
فونت
حجت الاسلام محمد حسن اختری:
عالمی اہلبیت کونسل کے سربراہ نے کہا : اور آل سعود نے عملی طور پر حرمین الشریفین کا انتظام اسرائیل اور امریکہ کے حوالے کردیا ہے۔
حجت الاسلام محمد حسن اختری

رسا نیوز ایجنسی کی رپورٹ کے مطابق عالمی اہلبیت کونسل کے سکریٹری حجت الاسلام محمد حسن اختری نے اپنی ایک گفت و گو کے درمیان حجاج بیت اللہ الحرام کے ساتھ سعودی عرب کے حکام کی توہین آمیز رفتار اور ان کی ناقص کارکردگی کی طرف اشارہ کرتے ہوئے کہا : سعودی عرب کے حکام کی توہین آمیز رفتار، غفلت ، لاپرواہی اور ان کی ناقص کار کردگی کی بنا پر حجاج کی جان اور عزت کوبڑے خطرات لاحق تھے ۔

انہوں نے وضاحت کرتے ہوئے بیان کیا : سعودی عرب نے حجاج کی سکیورٹی اور عزت و اکرام  کے بارے میں کوئي ضمانت نہیں دی اور ویزا صادر کرنے کے ناقص اور غیر منطقی  امور پر اصرار کرتا رہا اور سعودی عرب کے غیر منطقی اور غیر انسانی شرائط کی بنا پر ایرانیوں کی جان اور عزت کو محفوظ رکھنے کے لئے اس سال ایران نے حج پر نہ جانے کا فیصلہ کیا کیونکہ سعودی عرب کے حکام کی جانب سے حجاج کی عزت اور جان کو خطرات لاحق تھے ۔

عالمی اہلبیت کونسل کے سربراہ نے کہا : سعودی عرب کے حکام حاجیوں کی عزت و تکریم کرنے کے بجائے ان کی توہین اور تذلیل کرتے ہیں اور گذشتہ سال منی کا المناک واقعہ سعودی عرب کے حکام کی توہین آمیز رفتار، غفلت اور ان کی ناقص کارکردگی کا منہ بولتا ثبوت ہے۔

حجت الاسلام محمد حسن اختری نے بیان کیا : سعودی عرب کے حکام نے اس سال ایرانی حاجیوں کو ویزا صادر کرنے کے سلسلے میں متعدد مشکلات کھڑی کردیں، سعودی حکام نے جان بوجھ کر ایرانی حجاج کی عزت نفس کے ساتھ کھیلنا شروع کردیا اور انھیں اس سال فریضہ حج سے محروم کرنے کی اپنی سازشوں اور پالیسیوں کو عملی جامہ پہنا دیا ۔

انھوں نے کہا : سعودی عرب کے حکام کی طرف سے توہین آمیز رفتار کے پیش نظر اور ایرانی حجاج کی عزت و جان کو محفوظ رکھنے کے لئے اس سال حج پر نہ جانے کا فیصلہ کیا گيا ورنہ ایران نے فریضہ حج ادا کرنے کے سلسلے میں تمام امور مہیا کررکھےتھے۔

عالمی اہلبیت کونسل کے سربراہ نے کہا : سعودی عرب حج کے سلسلے میں امریکی اشاروں پر عمل کررہا ہے سعودی عرب نے مکہ و مدینہ کی سکیورٹی کے امور امریکی اور اسرائیلی سکیورٹی کمپنیوں کے حوالے کررکھے ہیں ۔ اور آل سعود نے عملی طور پر حرمین الشریفین کا انتظآم اسرائیل اور امریکہ کے حوالے کردیا ہے۔

انہوں نے کہا : سعودی عرب اپنی سیاسی پالیسیوں کو دوسرے اسلامی ممالک پر مسلط کرنے کی تلاش و کوشش کرتا ہے اور سعودی عرب خود فریضہ حج کو اپنے سیاسی اغراض و مقاصد اور وہابیت کے فروغ کے لئے استعمال کرتا ہے ۔

حجت الاسلام محمد حسن اختری نے کہا : مشرکین سے برائت فریضہ حج کا ایک اہم اصول ہے جسے سعودی حکام منعقد کرنے کی اجازت نہیں دیتے کیونکہ وہ امریکی اور اسرائیلی پالیسیوں پر گامزن ہیں۔

انھوں نے کہا : سعودی حکام اس دور کے شیاطین کے ساتھ ہیں اور ان کے خلاف کسی کو بولنے کی اجازت نہیں دیتے کیونکہ وہ خود بڑے شیطان امیرکہ کے حامی اور طرفدار ہیں اور امریکی فوجی اتحاد کا حصہ ہیں۔ انھوں نے کہا کہ سعودی عرب نے حج کی روح کو ختم کردیا ہے۔

عالمی اہلبیت کونسل کے سکریٹری نے گذشتہ سال منی کے المناک واقعہ کی طرف اشارہ کرتے ہوئے کہا : منی کے المناک واقعہ میں سعودی عرب کے حکام کی ناقص کارکردگی اور حجاج کے ساتھ توہین آمیز رفتار نے عالم اسلام کو داغ دار بنا دیا اور سعودی عرب کے حکام نے ہزاروں حاجیوں کو منی میں قربانی کی بھنٹ چڑھا دیا ۔

انہوں نے کہا : منی کا دردناک واقعہ تاریخ اسلام میں ہمیشہ زندہ رہےگا اور سعودی عرب کے حکام کو منی کے المناک واقعہ کے بارے میں جواب دینا پڑے گا۔

حجت الاسلام محمد حسن اختری نے کہا : منی کے واقعہ کے کئی دردناک پہلو ہیں منی میں کئی اسلامی ممالک کے حاجیوں نے تشنہ لب دم توڑ دیا اور سعودی عرب کے حکام انھیں ایک گھونٹ پانی بھی نہیں پلا سکے۔

تبصرہ بھیجیں
نام:
ایمیل:
* ‫نظریہ‬:
‫برای‬ مہربانی اپنے تبصرے میں اردو میں لکھیں.
‫‫قوانین‬ ‫ملک‬ ‫و‬ ‫مذھب‬ ‫کے‬ ‫خالف‬ ‫اور‬ ‫قوم‬ ‫و‬ ‫اشخاص‬ ‫کی‬ ‫توہین‬ ‫پر‬ ‫مشتمل‬ ‫تبصرے‬ ‫نشر‬ ‫نہیں‬ ‫ہوں‬ ‫گے‬