‫‫کیٹیگری‬ :
08 April 2017 - 12:58
‫نیوز‬ ‫کوڈ‬: 427377
فونت
حجت الاسلام و المسلمین سید ساجد علی نقوی:
عالمی حالات پہ تبصرہ کرتے ہوئے ایس یو سی پاکستان کے سربراہ کا کہنا تھا کہ وزیراعظم جرات کریں، علماء سے بیانیہ نہ لیں، ریاست کا بیانیہ جاری کریں، علماء بیانیہ دے چکے، اب مزید بنانیہ کی ضرورت نہیں، آخر کب تک قوم افراتفری، انتشار و فساد کا شکار رہے گی۔
حجت الاسلام والمسلمین سید ساجد علی نقوی

رسا نیوز ایجنسی کی رپورٹ کے مطابق، شیعہ علماء کونسل پاکستان کے سربراہ حجت الاسلام و المسلمین سید ساجد علی نقوی نے ملکی و بین الاقوامی صورتحال پر تبصرہ کرتے ہوئے کہا ہے کہ وزیراعظم جرات کریں، علماء سے بیانیہ نہ لیں، ریاست کا بیانیہ جاری کریں، علماء بیانیہ دے چکے اب مزید بیانیہ کی ضرورت نہیں، آخر کب تک قوم افراتفری، انتشار و فساد کا شکار رہے گی، کثیر الملکی اتحاد تو وجود میں آگیا، کیا کثیر الملکی عسکری اتحاد مسئلہ کشمیر و فلسطین کیلئے بھی کوئی کردار ادا کریگا۔؟

حجت الاسلام و المسلمین نقوی نے کہا ہے کہ علماء کے بیانیے کی ضرورت نہیں کیونکہ یہ مذہبی یا فرقہ وارانہ مسئلہ نہیں ہے، یہ ملکی معاملہ ہے، جس کیلئے ریاست کو بیانیہ مرتب کرنے کی ضرورت ہے۔ یہ جرات وزیراعظم کریں اور ایسا بیانیہ جاری کریں، جس سے قوم اضطراب اور کشمکش کی صورتحال سے باہر نکلے اور ملک کی صورتحال معمول پر آئے۔ کب تک عوام افراتفری، انتشار، فساد کا شکار رہیں گے اور تذلیل و رسوائی برداشت کرتے رہیں گے۔

ان کا مزید کہنا تھا کہ ڈاکٹر عاصم حسین جس طرح رہا ہوئے، ان پر جس طرح الزامات کی بوچھاڑ کی گئی اور پھر وہ تمام الزامات جھاگ کی طرح بیٹھ گئے، ملک کی اس بدقسمتی پر رونا آتا ہے کہ پاک سرزمین کیساتھ کس طرح کھلواڑ کیا جا رہا ہے۔ ان کا مزید کہنا تھا کہ یہ سوال ہر ذمہ دار شخص کو اپنے آپ سے کرنا چاہیے کہ کیا ملک جن مقاصد کیلئے حاصل کیا گیا کیا تھا، اس کا حق ادا کرنے کی سعی کی گئی، افسوس ابھی تک ایسا کہیں بھی محسوس نہیں ہوتا۔

حجت الاسلام و المسلمین نقوی کا مزید کہنا تھا کہ کثیر الملکی اتحاد تو وجود میں آگیا، لیکن کیا یہ اتحاد کشمیر، فلسطین اور برما کے مسائل کے حل کیلئے بھی کوئی کردار ادا کرے گا، کیا حکومت پاکستان مسئلہ کشمیر کے حل کیلئے اس پلیٹ فارم سے مستفید ہوسکے گی یا اپنا اثر و رسوخ استعمال کرتے ہوئے کشمیریوں پر جاری مظالم کو رکوانے اور مسئلہ کشمیر حل کرنے کیلئے اس اتحاد میں شامل ممالک کی حمایت و معاونت حاصل کرسکے گی، اگر ایسا نہیں ہوا تو پھر یہ بات عیاں ہوجائیگی کہ اس اتحاد میں پاکستان کی شمولیت دباؤ کا نتیجہ ہے۔/۹۸۸/ ن۹۴۰

تبصرہ بھیجیں
نام:
ایمیل:
* ‫نظریہ‬:
‫برای‬ مہربانی اپنے تبصرے میں اردو میں لکھیں.
‫‫قوانین‬ ‫ملک‬ ‫و‬ ‫مذھب‬ ‫کے‬ ‫خالف‬ ‫اور‬ ‫قوم‬ ‫و‬ ‫اشخاص‬ ‫کی‬ ‫توہین‬ ‫پر‬ ‫مشتمل‬ ‫تبصرے‬ ‫نشر‬ ‫نہیں‬ ‫ہوں‬ ‫گے‬