‫‫کیٹیگری‬ :
17 November 2018 - 21:34
‫نیوز‬ ‫کوڈ‬: 437673
فونت
حجت الاسلام والمسلمین راجہ ناصر عباس جعفری :
مجلس وحدت مسلمین پاکستان کے سربراہ نے کہا : پاکستان پر تسلط کے لئے سامراجیت و اسلام دشمن عناصر گھات لگائے ہوئے ہیں ہم آپ کی حمایت سے ان کی لالچ بھڑی نگاہوں کو اندھا کر دینگے اور اپنی ذمہ داری کو پورا کرتے ہوئے خداوند عالم کے فضل سے اس سازش کو ناکام بنا دینگے ۔
 راجہ ناصر عباس جعفری

رسا نیوز ایجنسی کے رپورٹر کی رپورٹ کے مطابق مجلس وحدت مسلمین پاکستان کے سربراہ حجت الاسلام والمسلمین راجہ ناصر عباس جعفری نے ایران کے مقدس شہر قم میں ایک عظیم الشان جلسہ عام سے خطاب کرتے ہوئے علماء کرام سے امام زمانہ عج کی تاج پوشی کی مبارک باد پیش کرتے ہوئے کہا : ہم سرباز امام زمانہ عج کو اپنی روحانی تربیت و خودسازی کے ذریعہ حقیقی ناصر امام بننا چاہیئے تا کہ ہمیشہ نصرت امام کے لئے آمادہ رہیں ۔

انہوں نے طلاب و علماء کرام سے پاکستان میں با بصیرت طلاب و علماء کی ضرورت کی تاکید کرتے ہوئے بیان کیا : ہم لوگ اس وقت بہت ہی سخت حالات سے گزر رہے ہیں جہاں ہمارے چارو جانب دشمنوں کا یلغار ہیں سامراجی طاقت اپنی تمام تر قوت پاکستان میں صرف کر رہی ہے تا کہ اس ملک کو مکمل طور سے اپنے چنگل میں کر لے مگر ہم لوگ الہی قوت کے مدد سے دشمن کی تمام سازش کو ناکام بنا دے نگے ۔

حوزہ علمیہ پاکستان کے مشہور استاد نے حوزہ علمیہ قم کو ایک عظیم نعمت قرار دیتے ہوئے کہا : ہم اپنے طلاب بھائیوں و بزرگوں سے درخواست کرتے ہیں کہ پاکستان کی موجودہ صورت حال میں آپ لوگوں کی بہت ضرورت ہے ، اپ کی فقیہ کی صورت میں پاکستان کو ضرورت ہے ، فلسفی و اصولی و تربیتی و اخلاقی و دوسرے تمام اسلامی فنون میں آپ کی ضرورت ہے ۔

انہوں نے وضاحت کرتے ہوئے کہا : آپ علماء کرام پاکستان کی امید ہیں شیعوں کی امید ہیں آپ کی پشت پناہی پر ہی ہمارا ملک یک حقیقی اسلامی ملک کے طور پر نمایا ہوگی ۔

راجہ ناصر عباس جعفری نے طلاب کرام سے نماز شب کی تاکید کرتے ہوئے بیان کیا : جہاں روایت میں نماز شب کی تاکید کی گئی ہے وہیں ہمارے بزرگوں نے بھی اس پر عمل کر کے مقرب بارگاہ الہی کا عملی نمونہ پیش کیا ہے اور بزرگ علماء کرام نے بھی طلاب کے لئے نماز شب واجب قرار دیا ہے لہذا ہم لوگ خود کو فراموش نہ کریں اور اپنی تکامل کے راہ پر ہمیشہ قدم پڑھاتے رہیں ۔

حوزہ علمیہ کے مشہور و معروف استاد نے کہا : مجھے درس و تدریس سے کافی لگاو تھا مجھے مدرسہ میں رہ کر طلاب کی تربیت کرنے کو تمام دوسرے امور پر افضل جانتا تھا میں نے حوزہ علمیہ کی تمام اہم کتابوں کا بہت ہی دقیق مطالعہ کیا تا کہ اس عظیم نعمت کو دوسروں تک پہوچا سکوں مگر پاکستان کے حالات نے مجبور کر دیا اور مجھے حوزہ علمیہ سے نکل کر عوام می مشکلات حل کرنے میں مشغول ہونا پڑا ۔

انہوں نے وضاحت کرتے ہوئے کہا : آج بھی میری دلی تمنا ہے کہ حوزہ علمیہ میں اپنے درس و تدریس میں مشغول ہو جاتا اور علوم آل محمد کی تروج و فروغ میں اپنی زندگی گزارتا ۔

مجلس وحدت مسلمین پاکستان کے سربراہ نے کہا : مجھے وہ زمانہ یاد ہے کہ جب پاکستان میں ہر طرف شیعوں کو نشانہ بنایا جا رہا تھا ، لاشوں پر لاش اٹھائے جا رہے تھے ، شیعوں کا وجود ختم کیا جا رہا تھا ، ان کو محدود کرنے کی کوشش کی جا رہی تھی ، کوئی بات سننے والا نہیں تھا ، شیعوں کی جائداد کو حراج کیا جا رہا تھا تب ہمارے لوگوں نے شیعوں کے تحفظ کے لئے قدم بڑھایا اور آج شیعہ پہلے کے بنسبت کچھ بہتر ہیں مگر یہ اول قدم ہے انشاء اللہ خداوند کریم اور اہلبیت علیہم السلام کی عنایات سے بہت اچھے حالات در پیش دیکھ رہے ہیں ۔

قابل ذکر ہے کہ حوزہ علمیہ قم کی عظیم اور قدیمی درسگاہ، مدرسہ مبارکہ حجتیہ  میں مجلس وحدت مسلمین پاکستان شعبہ قم المقدس کی جانب سے ایک عظیم الشان پروگرام کا انعقاد ہوا. جس میں حوزہ علمیہ قم کے اساتذہ وطلاب اور زائرین نے کثیر تعداد میں شرکت کی۔

تلاوت کلام مجید اور ترانہ کے بعد شعبہ قم کے سیکرٹری جنرل جناب مولانا عادل مھدوی نے استقبالی کلمات ادا کئے اور مہمانان گرامی اور سب شرکاء کو خیر مقدم کہا۔/۹۸۹/ف۹۲۰/

تبصرہ بھیجیں
نام:
ایمیل:
* ‫نظریہ‬:
‫برای‬ مہربانی اپنے تبصرے میں اردو میں لکھیں.
‫‫قوانین‬ ‫ملک‬ ‫و‬ ‫مذھب‬ ‫کے‬ ‫خالف‬ ‫اور‬ ‫قوم‬ ‫و‬ ‫اشخاص‬ ‫کی‬ ‫توہین‬ ‫پر‬ ‫مشتمل‬ ‫تبصرے‬ ‫نشر‬ ‫نہیں‬ ‫ہوں‬ ‫گے‬