13 September 2016 - 22:36
‫نیوز‬ ‫کوڈ‬: 423206
فونت
طالبان کے ترجمان کی جانب سے جاری بیان میں ہندوستان پر زور دیا گیا ہے کہ وہ کابل کو فوجی امداد اور دیگر پیشرفتہ ہتھیاروں کی فراہمی سے باز رہے ۔
طالبان

رسا نیوز ایجنسی کی رپورٹ کے مطابق افغانستان میں سرگرم وہابی دہشت گرد تنظیم طالبان نے  ہندوستان کو خبردار کیا ہے کہ وہ افغان حکومت کو جدید ہتھیاروں کی فراہمی سے باز رہے ۔

طالبان کے ترجمان ذبیح اللہ مجاہد کی جانب سے جاری بیان میں ہندوستان  پر زور دیا گیا ہے کہ وہ کابل کو فوجی امداد اور دیگر پیشرفتہ ہتھیاروں کی فراہمی سے باز رہے کیونکہ ایسا کرنا ایک جنگ زدہ ملک سے دشمنی کے مترادف ہوگا ۔

ترجمان کا کہنا تھا : یہ جدید ہتھیار نہ صرف افغان شہریوں کے خلاف استعمال ہوتے ہیں بلکہ اس سے ان کے گھر اور دیگر شہری انفرااسٹرکچر بھی تباہ ہوتا ہے۔

ذرائع کے مطابق طالبان کی دہشت گردی خود افغان عوام کے لئے مہلک ثابت ہورہی ہے اور طالبان نے افغانستان کو تباہ کردیا ہے افغان حکومت کے مطابق افغانستان کی تباہی میں پاکستان کا بھی اہم کردار رہا ہے کیونکہ پاکستان آج بھی طالبان دہشت گردوں کی سرپرستی کررہا ہے۔

ہندوستان کے زیرانتظام کشمیر میں منگل کو عید الاضحی کے موقع پر وادی کے سبھی اضلاع میں سخت ترین کرفیو نافذ کرکے عیدگاہوں اور مرکزی مقامات پر نمازعید پر پابندی عائد کردی گئی تھی جبکہ تازہ ترین مظاہروں میں مزید دو افراد ہلاک اور درجنوں دیگرزخمی ہوگئے۔

سری نگر سے ہمارے نمائندے نے خبردی ہے کہ منگل کو عیدالاضحی کے موقع پر حکام نے وادی میں سخت ترین کرفیو نافذ کردیا تھا اور کسی بھی مرکزی عیدگاہ یا جامع مسجد میں نماز عید ادا نہیں کرنے دی گئی ۔

البتہ چھوٹی مساجد اور محلوں میں لوگوں نے نماز عید ادا کی ۔ سری نگر کی تاریخی جامع مسجد منگل کو بھی سنسان پڑی تھی ۔ حکام نے پہلے ہی اعلان کردیا تھا کہ وادی کشمیر کے سبھی اضلاع میں کرفیو نافذ رہےگا اور کسی کو بھی گھر سے باہر نکلنے کی اجازت نہیں ہوگی ۔

لیکن اس کے باوجود لوگوں نے مختلف مقامات پر گھروں سے باہر نکل کر زبردست مظاہرے کئے ۔ شمالی قصبہ بانڈی پورہ میں پولیس اور مظاہرین کے درمیان شدید تصادم ہوا جس میں ایک شخص جاں بحق اور متعدد دیگر زخمی ہوگئے ۔ شوپیاں میں بھی شدید پرتشدد مظاہرے میں ایک نوجوان مارا گیا جبکہ درجنوں افراد زخمی ہوئے ہیں ۔

دریں اثنا پولیس نے بیشتر علیحدگی پسند رہنماؤں کو یا توپہلے سے ہی حراست میں لے لیا تھا یا پھر آج اس وقت حراست میں لے لیا جب انہوں نے نماز عید کے اجتماع میں شرکت کے لئے گھر سے باہر نکلنے کی کوشش کی ۔

خبروں کے مطابق پولیس نے انجمن اتحاد المسلمین کے رہنما مولوی مسرور عباس انصاری کو اس وقت گرفتارکرلیا جب انہوں نے اپنے گھر سے نکل کر نمازعید کے اجتماع کی جانب جانے کی کوشش کی ۔ انجمن شرعی شیعیان کے سربراہ مولانا آغا حسن بڈگامی کو بھی پو لیس نے ان گھر میں نظر بند کردیا ۔/۹۸۹/ف۹۴۰/

تبصرہ بھیجیں
نام:
ایمیل:
* ‫نظریہ‬:
‫برای‬ مہربانی اپنے تبصرے میں اردو میں لکھیں.
‫‫قوانین‬ ‫ملک‬ ‫و‬ ‫مذھب‬ ‫کے‬ ‫خالف‬ ‫اور‬ ‫قوم‬ ‫و‬ ‫اشخاص‬ ‫کی‬ ‫توہین‬ ‫پر‬ ‫مشتمل‬ ‫تبصرے‬ ‫نشر‬ ‫نہیں‬ ‫ہوں‬ ‫گے‬