04 October 2016 - 19:00
‫نیوز‬ ‫کوڈ‬: 423625
فونت
بشار اسد :
شام کے صدر جمہور نے کہا : مغربی ملکوں خاص طور پر امریکا نے ایران کے اسلامی انقلاب سے خائف ہو کر سعودی عرب کو حکم دیا ہے کہ وہ علاقے میں فرقہ واریت کو ہوا دے۔
بشار اسد

رسا نیوز ایجنسی کی رپورٹ کے مطابق شام کے صدر بشار اسد نے اپنے ایک انٹرویو میں تاکید کرتے ہوئے کہا : امریکا اس بات سے خوفزدہ ہے کہ دنیا کی قومیں ایران کے اسلامی انقلاب کو اپنا آئیڈیل سمجھتی ہیں۔

انہوں نے کہا : مغربی ملکوں خاص طور پر امریکا نے ایران کے اسلامی انقلاب سے خائف ہو کر سعودی عرب کو حکم دیا ہے کہ وہ علاقے میں فرقہ واریت کو ہوا دے۔

شام کے صدر نے بیان کیا : امریکا، شام کا بحران شروع ہونے سے پہلے یہ اصرار کر رہا تھا کہ دمشق استقامتی محاذ اور اسلامی جمہوریہ ایران کے خلاف رول ادا کرے لیکن شام نے کبھی بھی امریکا کا یہ مطالبہ تسلیم نہیں کیا۔

انہوں نے کہا : امریکا یہ بھی مطالبہ کر رہا تھا کہ  شام مشرق وسطی میں سازباز کے عمل میں شامل ہو جائے جس کے تحت فلسطین کے مظلوم عوام کے حقوق کو نظر انداز کیا جا رہا ہے۔

شام کے صدر نے کہا : اس وقت ان کا ملک دہشت گردی کے خلاف جنگ کا اصل میدان بنا ہوا ہے اور شام کے حالات کا دنیا کی سیاست کے نقشے پر بہرحال اثرمرتب ہو گا۔

بشار اسد نے تاکید کرتے ہوئے کہا : شام کی حکومت اپنے اقتدار، عوام اور قومی مفادات کے تحفظ کے لئے ڈٹی ہوئی ہے، شام کو ثابت قدم رکھنے میں ایران کا بنیادی کردار ہے یہ ایسا حقیقت جو کسی پر پوشیدہ نہیں ہے اس کا سب کو علم ہے۔

واضح رہے کہ شام وہ ملک ہے جس نے کبھی بھی صیہونی ریاست کو تسلیم نہیں کیا اور فلسطین پر صیہونی ممالک کی بربریت کا مخالف رہا ہے اور فلسطینیوں کی مدد میں کبھی کوئی کمی نہیں کی ہے اسی طرح لبنان کی مقاوت کا اسرائیل سے مقابلہ میں ساتھ دیا ہے جس کی وجہ سے صیہونی پالیسی نے شام میں بحران ایجاد کر کے بشار اسد حکومت کو ختم کرنے کی ناکام کوشش کر رہا ہے ۔/۹۸۹/ف۹۳۰/ک۳۸۴/

تبصرہ بھیجیں
نام:
ایمیل:
* ‫نظریہ‬:
‫برای‬ مہربانی اپنے تبصرے میں اردو میں لکھیں.
‫‫قوانین‬ ‫ملک‬ ‫و‬ ‫مذھب‬ ‫کے‬ ‫خالف‬ ‫اور‬ ‫قوم‬ ‫و‬ ‫اشخاص‬ ‫کی‬ ‫توہین‬ ‫پر‬ ‫مشتمل‬ ‫تبصرے‬ ‫نشر‬ ‫نہیں‬ ‫ہوں‬ ‫گے‬