‫‫کیٹیگری‬ :
24 October 2016 - 22:18
‫نیوز‬ ‫کوڈ‬: 424041
فونت
حجت الاسلام احمد اقبال رضوی:
سرزمین پاکستان کے مشھور شیعہ عالم دین نے ریاستی اداروں کی جانب سے مختلف شخصیات کو شیعہ ہونے کے جرم میں اغواء کرنا اضطراب کا باعث بتایا ۔
حجت الاسلام احمد اقبال رضوی حجت الاسلام احمد اقبال رضوی

 

رسا نیوز ایجنسی کی رپورٹ کے مطابق، ایم ڈبلیو ایم کے کے مرکزی ڈپٹی سیکرٹری جنرل حجت الاسلام احمد اقبال رضوی ایک بیان میں کہا: ملک دشمن قوتوں کی ایماء پر ملت تشیع کو ریاستی جبر کا نشانہ بنایا جا رہا ہے ۔

انہوں نے کہا: حکمران ملت جعفریہ کو دیوار سے لگانے کی کوشش ترک کریں اور ہمارے خلاف کی جانیوالی نا انصافیوں کا فوری طور پر تدارک کیا جائے۔

مجلس وحدت مسلمین پاکستان کے مرکزی ڈپٹی سیکرٹری جنرل نے کہا : نیشنل ایکشن پلان کی آڑ میں ملت تشیع کے خلاف حکومت کے ناروا اقدام پوری قوم کے لیے تشویش کا باعث ہیں، اخوت و وحدت کے داعی شیعہ علماء کی پاکستانی شہریت کی معطلی اور قومی شناختی کو بلاک کیا جانا ملک کو انتشار کی طرف لے جانے کی دانستہ سازش ہے، ملک دشمن قوتوں کی ایماء پر ملت تشیع کو ریاستی جبر کا نشانہ بنایا جا رہا ہے، پنجاب کے مختلف میں علاقوں سیاسی و سماجی شخصیات کو محض شیعہ ہونے کے جرم میں حکومتی اداروں کی طرف سے اٹھایا جانا ہمارے اضطراب میں اضافے کا باعث ہے ۔

انہوں نے کہا: ہماری حب الوطنی اور قانون و آئین کی پاسداری کو کمزوری سمجھنا حکومت کا غیر دانشممدانہ اقدام ہے، حکمران ملت جعفریہ کو دیوار سے لگانے کی کوشش ترک کرے اور ہمارے خلاف کی جانیوالی نا انصافیوں کا فوری طور پر تدارک کیا جائے۔

حجت الاسلام رضوی نے کہا: تحریک پاکستان سے قیام پاکستان تک ملت جعفریہ کی ان گنت قربانیاں ہیں ہم اس ملک کے ذمہ دار شہری ہیں اور اپنے ساتھ کسی قسم کے امتیازی سلوک کیو قبول نہیں کریں گے۔

انہوں نے وزیر اعظم نواز شریف، آرمی چیف جنرل راحیل شریف اور وزیر داخلہ چوہدری نثار علی خان سے مطالبہ کیا کہ نیشنل ایکشن پلان کو سیاسی مقاصد کے حصول کی بجائے دہشت گردی کے خلاف استعمال کیا جائے اور بے گناہ شیعہ شخصیات کی گرفتاریاں بند کی جائیں ۔/۹۸۸/ن۹۴۰

تبصرہ بھیجیں
نام:
ایمیل:
* ‫نظریہ‬:
‫برای‬ مہربانی اپنے تبصرے میں اردو میں لکھیں.
‫‫قوانین‬ ‫ملک‬ ‫و‬ ‫مذھب‬ ‫کے‬ ‫خالف‬ ‫اور‬ ‫قوم‬ ‫و‬ ‫اشخاص‬ ‫کی‬ ‫توہین‬ ‫پر‬ ‫مشتمل‬ ‫تبصرے‬ ‫نشر‬ ‫نہیں‬ ‫ہوں‬ ‫گے‬