31 July 2020 - 13:57
‫نیوز‬ ‫کوڈ‬: 443324
فونت
حجت الاسلام سید ساجد علی نقوی :
قائد ملت جعفریہ پاکستان نے کہا کہ حضرت مسلم بن عقیل کو اعزاز حاصل ہے کہ وہ اسلام کی عظیم متبرک ہستیوں کی آغوش اور صحبت میں پرورش لیتے رہے۔

رسا نیوز ایجنسی کی رپورٹ کے مطابق قائد ملت جعفریہ پاکستان حجت الاسلام سید ساجد علی نقوی نے9ذی الحج شہادت حضرت مسلم ؑبن عقیل کے موقع پر اپنے پیغام میں کہا کہ حضرت مسلم بن عقیل کو اعزاز حاصل ہے کہ وہ اسلام کی عظیم متبرک ہستیوں کی آغوش اور صحبت میں پرورش لیتے رہے۔ یہی وجہ ہے کہ انہوں نے حضرت علی ابن ابی طالبؑ کے زمانہ خلافت میں ان کے ساتھ بھرپور معاونت کی اور اسلام کی ترویج و تحفظ کے لئے آپ کے ہم قدم رہے جب حضرت امام حسینؑ نے رخت سفر باندھا تو حضرت مسلم بن عقیل کو اپنا راز دار اور نائب خاص مقرر فرماکر کوفہ کی طرف روانہ کیا۔

علامہ سید ساجد علی نقوی نے کہا ہے کہ باطل نظام کے خلاف قیام کی جدوجہد میں عوامی رابطہ مہم کی ذمہ داری جس شخصیت کے ذمہ لگائی گئی وہ حضرت مسلم بن عقیل بن ابی طالب تھے۔

حضرت مسلم بن عقیل نے اسلام کے سفیر کا کردار ادا کیا کیونکہ وہ جس ہستی کے حکم پر مدینہ سے کوفہ کی طرف امر بالمعروف اور نہی عن المنکر کا فریضہ انجام دینے کے لئے روانہ ہوئے وہ ہستی (امام حسین ؑ) دین اسلام اور شریعت محمدی کے دفاع اور تحفظ کے لئے کمربستہ تھی اور حضرت مسلم بن عقیل نواسہ رسول کے شانہ بشانہ اس جدوجہد میں شریک تھے ۔رہبر کی اطاعت، حضرت مسلم ؑ کی شہادت کا بہترین درس ہے ۔

علامہ ساجد نقوی نے کہا کہ حضرت مسلم بن عقیل وفاشعاری اور شجاعت و بہادری کا پیکر تھے۔ حضرت علی ؑ کی طرح جنگی مہارتوں اور شجاعت و بہادری کے جوہر دکھائے جب کوفہ کے گلی اور کوچوں میں آپ کویزیدی افواج نے گھیر لیا۔ شدت پیاس اور بے یارومددگار ہونے کے باوجود حضرت مسلم بن عقیل فوجیوں کے مقابل تنہا ہوکر بھی مردانہ وار لڑے۔

علامہ ساجد نقوی نے مزید کہا کہ آپ کی زندگی کے مطالعہ سے جہاں ہمیں دین اور دین کے رہبروں سے وفا کا سبق ملتا ہے وہاں دباو ¿ میں آکر وفاداریاں بدلنے والے اور بیعت سے ہاتھ اٹھالینے والے چہرے بھی بے نقاب ہوتے ہیں یہ تاریخ کا ایک اہم اور تاریک باب ہیں جن سے عبرت حاصل کرنے کی ضرورت ہے لہذا ہمیں حضرت مسلم بن عقیل کی طرح اسلام اور اسلامی اقدار سے عملی وابستگی’ رہبر کی اطاعت’ دینی اقدار کے تحفظ اور قربانی کے جذبے کو زندہ رکھنا چاہیے اورمنفی قوتوں کا مقابلہ کرنے کیلئے تیار چاہیے۔

تبصرہ بھیجیں
نام:
ایمیل:
* ‫نظریہ‬:
‫برای‬ مہربانی اپنے تبصرے میں اردو میں لکھیں.
‫‫قوانین‬ ‫ملک‬ ‫و‬ ‫مذھب‬ ‫کے‬ ‫خالف‬ ‫اور‬ ‫قوم‬ ‫و‬ ‫اشخاص‬ ‫کی‬ ‫توہین‬ ‫پر‬ ‫مشتمل‬ ‫تبصرے‬ ‫نشر‬ ‫نہیں‬ ‫ہوں‬ ‫گے‬