‫‫کیٹیگری‬ :
29 September 2013 - 18:02
‫نیوز‬ ‫کوڈ‬: 5999
فونت
آیت الله شبستری :
رسا نیوز ایجنسی ـ ایران کے شہر آذربائجان کے عالم دین نے متنبہ کرتے ہوئے بیان کیا : اوباما کی طرف سے جمہوریہ اسلامی ایران کے صدر کے لئے اعتدال پسند جیسے الفاظ کا استعمال ان کی شیطانی سازش ہو سکتی ہے تا کہ اس سازش کے تحت حجت الاسلام روحانی کو عوام سے الگ کیا جا سکے ۔
آيت الله شبستري


رسا نیوز ایجنسی کے رپورٹر کی رپورٹ کے مطابق ایران کے شہر آذربائجان کے عالم دین آیت الله محسن مجتهد شبستری نے اس ہفتہ نماز جمعہ کے خطبہ میں جمہوریہ اسلامی ایران کے صدر حجت الاسلام روحانی کی اقوام متحدہ کی سالانہ اجلاس میں تقریر کی طرف اشارہ کرتے ہوئے بیان کیا : جمہوریہ اسلامی ایران کے صدر حجت الاسلام روحانی کی اقوام متحدہ کے سالانہ اجلاس اور غیر متعہد سربراہ کانفرنس میں تقریر قائد کے موقف کی ترجمانی تھی ۔

انہوں نے اس بیان کے ساتہ کہ ہمارے جمہوریہ اسلامی کے صدر کی تقریر عزت ، حکمت اور مصلحت سے لبریز تھی بیان کیا : ایسے حالات میں کہ بعض ملک کے اندر کے لوگ اور بعض بیرونی ملک کے لوگ ایران اور امریکا کے سربراہ کے ساتہ مذاکرہ کا انتظار کر رہے تھے ، حالانکہ یہ مغرب ممالک و متحدہ امریکا کے خوہشات کے مخالف انجام پایا ۔

آیت الله شبستری نے اس تاکید کے ساتہ کہ ایران کا جوہری پروگرام سلامتی کونسل کے ایجنڈا سے جدا ہونا چاہیئے وضاحت کی : ایران کی جوہری سرگرمی جمہوریہ اسلامی ایران پر پابندی کا ایک بہانہ ہے ، امریکا کا خوف اٹم بم سے نہیں ہے بلکہ علاقہ میں ایران کے اثر و رسوخ کی توسیع کی وجہ سے ہے ۔

انہوں نے اس اشارہ کے ساتہ کہ اقوام متحدہ میں اوباما کی تقریر کاخ سفید حکام کی طرف سے ایران سے رابطہ برقرار کرنے کے اشتیاق کو واضح کر رہی ہے بیان کیا : ھفتہ دفاع مقدس ایرانی قوم پر امریکا کی مظالم کو یاد دلا رہی ہے ، ایران کسی بھی صورت میں ان کے ظالمانہ رویہ کو بھلا نہیں سکتی ، امریکا اپنے گذشتہ کے ظلم کی کس طرح بھرپائی کرے گا ۔
 

تبصرہ بھیجیں
نام:
ایمیل:
* ‫نظریہ‬:
‫برای‬ مہربانی اپنے تبصرے میں اردو میں لکھیں.
‫‫قوانین‬ ‫ملک‬ ‫و‬ ‫مذھب‬ ‫کے‬ ‫خالف‬ ‫اور‬ ‫قوم‬ ‫و‬ ‫اشخاص‬ ‫کی‬ ‫توہین‬ ‫پر‬ ‫مشتمل‬ ‫تبصرے‬ ‫نشر‬ ‫نہیں‬ ‫ہوں‬ ‫گے‬