07 November 2016 - 15:18
‫نیوز‬ ‫کوڈ‬: 424329
فونت
عدالت نے تفتیشی افسر کی جسمانی ریمانڈ کی درخواست مسترد کرتے ہوئے حجت الاسلام مرزا یوسف کو عدالتی ریمانڈ پر جیل بھیج دیا اور تفتیشی افسر کو ۲۳ نومبر تک مقدمے کا چالان پیش کرنے کا حکم دیا۔
حجت الاسلام مرزا یوسف حسین


رسا نیوز ایجنسی کی رپورٹ کے مطابق، آل پاکستان شعیہ ایکشن کمیٹی کے مرکزی محرک اور بزرگ شیعہ عالم دین حجت الاسلام مرزا یوسف حسین کو اشتعال انگیز تقریر کے الزام میں جوڈیشل ریمانڈ پر جیل بھیج دیا گیا ہے۔

تفصیلات کے مطابق حجت الاسلام مرزا یوسف حسین کو کراچی کی انسداد دہشت گردی کی عدالت کے منتظم جج کے روبرو پیش کیا گیا، تفتیشی افسر نے عدالت میں مؤقف اختیار کیا کہ حجت الاسلام یوسف پر اشتعال انگیز تقاریر کا الزام ہے،

انہوں نے رواں برس مئی میں خرم زکی کی نماز جنازہ میں اشتعال انگیز تقریر کی تھی اور اس واقعہ کا مقدمہ شریف آباد تھانے میں درج ہے، لہٰذا حجت الاسلام یوسف مرزا کا 14 روزہ جسمانی ریمانڈ دیا جائے۔

حجت الاسلام یوسف مرزا کے وکیل نے ریمانڈ دینے کی مخالفت کرتے ہوئے کہا کہ علامہ یوسف مرزا پر جھوٹا الزام عائد کیا گیا ہے۔

عدالت نے تفتیشی افسر کی جسمانی ریمانڈ کی درخواست مسترد کرتے ہوئے حجت الاسلام مرزا یوسف کو عدالتی ریمانڈ پر جیل بھیج دیا اور تفتیشی افسر کو 23 نومبر تک مقدمے کا چالان پیش کرنے کا حکم دیا۔

واضح رہے کہ رینجرز نے علامہ مرزا یوسف کو دو روز قبل جامع مسجد و امام بارگاہ نور ایمان ناظم آباد سے گرفتار کیا تھا۔ /۹۸۸/ن۹۴۰

تبصرہ بھیجیں
نام:
ایمیل:
* ‫نظریہ‬:
‫برای‬ مہربانی اپنے تبصرے میں اردو میں لکھیں.
‫‫قوانین‬ ‫ملک‬ ‫و‬ ‫مذھب‬ ‫کے‬ ‫خالف‬ ‫اور‬ ‫قوم‬ ‫و‬ ‫اشخاص‬ ‫کی‬ ‫توہین‬ ‫پر‬ ‫مشتمل‬ ‫تبصرے‬ ‫نشر‬ ‫نہیں‬ ‫ہوں‬ ‫گے‬