27 November 2017 - 08:06
‫نیوز‬ ‫کوڈ‬: 431996
فونت
بھٹ شاہ پاکستان:
کنونشن سے خطاب کرتے ہوئے مقررین نے کہا کہ شہادت حسینی راستہ ہے اور زندہ رہ کر یزید کو للکارنا زینبی راستہ ہے، کامیاب مزاحمتی تحریک مقصد، نظم و ضبط اور ٹیم ورک کا مجموعہ ہے، اس دور کی شیعہ قیادت امام خامنہ ای، سید حسن نصراللہ کیصورت میں ہمیں میسر ہے۔
کربلا محور انسانیت کنونشن

رسا نیوز ایجنسی کی رپورٹ کے مطابق، اصغریہ علم و عمل تحریک پاکستان کا دوسرا مرکزی "کربلا محور انسانیت کنونشن" ثقافتی مرکز بھٹ شاہ ضلع مٹیاری سندھ میں جاری ہے۔ کنونش کے دوسرے روز انجینئر حسین شاہ موسوی، علامہ صادق رضا تقوی، پروفیسر ڈاکٹر زاہد علی زاہدی و دیگر مقررین نے خطاب کئے۔

مقررین نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ اسلامی مزاحمتی تحریک کی بنیاد رسول خدا نے رکھی، جب آپ کی مددگار حضرت خدیجہؑ اور حضرت علیؑ تھے، انقلاب کربلا اسی مزاحمت کی بلندی ہے، مزاحمت پہلے کمزور اور پھر طاقتور ہوتی ہے، مزاحمت کا اصول یہ ہے کہ جو کچھ کیا جائے، وہ اللہ کیلئے کیا جائے، اس کی راہ میں عزت و آبرو اور مال و اولاد قربان ہیں۔

انہوں نے کہا کہ امام خمینیؒ نے ہمیں بتایا کہ اگر دشمنی رکھنی ہے تو وقت کے جابر ترین اور فاسق ترین افراد کو للکارا جائے اور خمینیؒ بت شکن نے اس وقت کے طاغوت امریکا کو للکارا اور اس کا شیطانی چہرا ساری دنیا کے سامنے عیاں کر دیا۔

انہوں نے کہا کہ برائی کے خلاف مزاحمت نہ کریں، تو وہ زندہ بھی مردہ ہیں، وہ دیکھنے میں زندہ ہیں، مگر اصل میں مردہ ہے، افراد بھی مردہ ہیں اور قومیں بھی مردہ ہوسکتی ہیں۔

مقررین نے کہا کہ شہادت حسینی راستہ ہے اور زندہ رہ کر یزید کو للکارنا زینبی راستہ ہے، کامیاب مزاحمتی تحریک مقصد، نظم و ضبط اور ٹیم ورک کا مجموعہ ہے، اس دور کی شیعہ قیادت امام خامنہ ای، سید حسن نصراللہ کی صورت میں ہمیں میسر ہے۔  /۹۸۸/ ن۹۴۰

تبصرہ بھیجیں
نام:
ایمیل:
* ‫نظریہ‬:
‫برای‬ مہربانی اپنے تبصرے میں اردو میں لکھیں.
‫‫قوانین‬ ‫ملک‬ ‫و‬ ‫مذھب‬ ‫کے‬ ‫خالف‬ ‫اور‬ ‫قوم‬ ‫و‬ ‫اشخاص‬ ‫کی‬ ‫توہین‬ ‫پر‬ ‫مشتمل‬ ‫تبصرے‬ ‫نشر‬ ‫نہیں‬ ‫ہوں‬ ‫گے‬