21 October 2017 - 13:05
‫نیوز‬ ‫کوڈ‬: 430474
فونت
سرینگر میں کرفیو جیسی پابندیاں اور بندشیں عائد رہیں اور تاریخی جامع مسجد ایک مرتبہ پھر فورسز کے محاصرے میں رہی جسکی وجہ سے یہاں نماز جمعہ ادا نہ ہوسکی اور نہ ہی کسی نمازی کو جامع مسجد کی جانب جانے کی اجازت دی گئی۔ جامع مسجد کو چاروں اطراف سے پولیس و فورسز نے جمعہ کی صبح محاصرے میں لیا اور اس تاریخی مسجد میں نماز ادا کرنے کی اجازت نہیں دی۔
کشمیر

رسا ںیوز ایجنسی نے کی رپورٹ کے مطابق، کشمیر کی تاریخی جامع مسجد سرینگر کل ایک مرتبہ پھر فورسز کے محاصرے میں رہی، جس کی وجہ یہاں لگاتار چوتھے جمعہ کو بھی نماز جمعہ کی ادائیگی نہ ہوسکی۔

سرینگر میں کرفیو جیسی پابندیاں اور بندشیں عائد رہیں اور تاریخی جامع مسجد ایک مرتبہ پھر فورسز کے محاصرے میں رہی جسکی وجہ سے یہاں نماز جمعہ ادا نہ ہوسکی اور نہ ہی کسی نمازی کو جامع مسجد کی جانب جانے کی اجازت دی گئی۔ جامع مسجد کو چاروں اطراف سے پولیس و قابض فورسز نے جمعہ کی صبح محاصرے میں لیا اور اس تاریخی مسجد میں نماز ادا کرنے کی اجازت نہیں دی۔

معلوم ہوا ہے کہ کئی لوگوں نے جامع مسجد کی جانب جانے کی کوشش کی، تاہم یہاں تعینات فورسز نے اُنہیں مسجد کی جانب جانے کی اجازت نہیں دی۔ اس تاریخی مسجد کے اردگرد رہائش پذیر لوگوں نے بتایا کہ مسجد کے باہر جمعہ کو فورسز اور ریاستی پولیس کے اہلکاروں کی اضافی نفری تعینات کی گئی، جنہوں نے نمازیوں کو مسجد کے احاطے میں داخل ہونے کی اجازت نہیں دی۔

یہاں یہ بات قابل ذکر ہے کہ سال رفتہ اور امسال بھی تاریخی جامع مسجد بیسیوں مرتبہ بھارتی فورسز نرغے میں رہی۔ /۹۸۸/ ن۹۴۰
 

تبصرہ بھیجیں
نام:
ایمیل:
* ‫نظریہ‬:
‫برای‬ مہربانی اپنے تبصرے میں اردو میں لکھیں.
‫‫قوانین‬ ‫ملک‬ ‫و‬ ‫مذھب‬ ‫کے‬ ‫خالف‬ ‫اور‬ ‫قوم‬ ‫و‬ ‫اشخاص‬ ‫کی‬ ‫توہین‬ ‫پر‬ ‫مشتمل‬ ‫تبصرے‬ ‫نشر‬ ‫نہیں‬ ‫ہوں‬ ‫گے‬