26 August 2009 - 15:33
‫نیوز‬ ‫کوڈ‬: 177
فونت
آيت الله مکارم شيرازي:
رسا ايجنسي - حضرت آيت الله مکارم شيرازي نے اصحاب کهف کي داستا ن کي جانب اشارہ کرتے ہوئے کہا : افسوس هميشه کم ظرف لوگ بڑي باتيں کرتے ہيں اور اپنےلئے مقام و منزلت کے قائل ہيں .
آيت الله مکارم شيرازي

رسا نيوز ايجنسي  کے رپورٹر کي رپورٹ کے مطابق ، حضرت آيت الله ناصر مکارم شيرازي، نے اج ماه مبارک رمضان چوتھے دن ، حرم حضرت معصومه(س)، ميں روزه دارون و نمازگزارون کے مجمع ميں ، سوره کهف کي آيه‌ 13 تا16 کي تفسير بيان کرتے ہوئے اس سے استفادہ کرنے کي تاکيد کي. 


انہوں نے اصحاب کهف کي داستان کي جانب اشارہ کرتے ہوئے کہا : اختلاف بہت ساري مشکلات کي جڑ ہے  ، اور يہ انسان کي عزت، آبرو، عظمت، دين و دنيا کو نابود کرسکتا ہے.


اس مرجع تقليد نے اس داستان ميں اس زمانہ ميں بادشاہوں کوخدا کہے جانے کي جانب اشارہ کرتے ہوئے اظھار کيا: جب انسان کو زر و زيور مل جاتا ہے تو تصور کرتا اسے سب کچھ مل گيا ہے اسي بناء پر طاغوتي راستہ اپناتا ہے اور خود کو خدا سمجھ بيٹھتا ہے .

 

انہوں نے واضح طورپر فرمايا : کچھ لوگ خود کو بڑا ظاھر کررہے ہيں اور يہ ان کي کم ظرفي کي دليل ہے ،کيونکہ اس طرح کي باتيں کم ظرف انسانوں کي جانب سے پيش اتيں ہيں ، حضرت علي(ع) جبکہ اس مقام اور منزلت پر تھے کبھي ان سے اس طرح کي باتيں نہيں سني گئي.

 

حضرت آيت الله مکارم شيرازي نے تاکيد کي : افسوس کہ کم ظرف لوگ بہت جلد بڑي باتيں کرتے ہيں اور اپنے لئے اعلي مقام اور منزلت کے قائل ہوتے ہيں ، جب با ظرف انسان کو اگر پوري دنيا بھي دے دي جائے تو بھي اس ميں کوئي تبديلي واقع نہي ہوتي .


تبصرہ بھیجیں
نام:
ایمیل:
* ‫نظریہ‬:
‫برای‬ مہربانی اپنے تبصرے میں اردو میں لکھیں.
‫‫قوانین‬ ‫ملک‬ ‫و‬ ‫مذھب‬ ‫کے‬ ‫خالف‬ ‫اور‬ ‫قوم‬ ‫و‬ ‫اشخاص‬ ‫کی‬ ‫توہین‬ ‫پر‬ ‫مشتمل‬ ‫تبصرے‬ ‫نشر‬ ‫نہیں‬ ‫ہوں‬ ‫گے‬