03 September 2009 - 15:20
‫نیوز‬ ‫کوڈ‬: 217
فونت
تحفہ مبلغ : (دوسري قسط)
ھم اس سے پہلے قارئين کي خدمت ميں جناب ابوذر اور پيغمبر اسلام ( صلي الله عليه و آله وسلم)کے درميان ، گفتگو کي پہلي قسط پيش کرچکے ہيں اور اسي کي دوسري قسط اپکي خدمت ميں پيش ہے .
تحفہ مبلغ

 

قُلْتُ وَ أَيُّ الْجِهَادِ أَفْضَلُ؟

قَالَ ـ صلي الله عليه و آله ـ : مَا عُقِرَ فِيهِ جَوَادُهُ وَ أُهَرِيقَ دَمُهُ‏.

قُلْتُ: وَ أَيُّ آيَةٍ أَنْزَلَهَا اللَّهُ عَلَيْکَ أَعْظَمُ ؟

قَالَ ـ صلي الله عليه و آله ـ :آيَةُ الْکُرْسِيِ‏.

قَالَ ابو ذر : قُلْتُ : يَا رَسُولَ اللَّهِ فَمَا کَانَتْ صُحُفُ إِبْرَاهِيمَ ؟

قَالَ: کَانَتْ أَمْثَالًا کُلُّهَا أَيُّهَا الْمَلِکُ الْمُسَلَّطُ الْمُبْتَلَى إِنِّي لَمْ أَبْعَثْکَ لِتَجْتَمِعَ الدُّنْيَا بَعْضَهَا عَلَى بَعْضٍ وَ لَکِنِّي بَعَثْتُکَ لِتَرُدَّ عَنِّي دَعْوَةَ الْمَظْلُومِ فَإِنِّي لَا أَرُدُّهَا وَ إِنْ کَانَتْ مِنْ کَافِرٍ أَوْ فَاجِرٍ فُجُورُهُ عَلَى نَفْسِهِ وَ کَانَ فِيهَا أَمْثَالٌ وَ عَلَى الْعَاقِلِ مَا لَمْ يَکُنْ مَغْلُوباً عَلَى عَقْلِهِ أَنْ يَکُونَ لَهُ ثَلَاثُ سَاعَاتٍ سَاعَةٌ يُنَاجِي فِيهَا رَبَّهُ وَ سَاعَةٌ يُفَکِّرُ فِيهَا فِي صُنْعِ اللَّهِ تَعَالَى وَ سَاعَةٌ يُحَاسِبُ فِيهَا نَفْسَهُ فِيمَا قَدَّمَ وَ أَخَّرَ وَ سَاعَةٌ يَخْلُو فِيهَا بِحَاجَتِهِ مِنَ الْحَلَالِ مِنَ المَطْعَمِ وَ الْمَشْرَبِ وَ عَلَى الْعَاقِلِ أَنْ لَا يَکُونَ ظَاعِناً إِلَّا فِي ثَلَاثٍ تَزَوُّدٍ لِمَعَادٍ أَوْ مَرَمَّةٍ لِمَعَاشٍ أَوْ لَذَّةٍ فِي غَيْرِ مُحَرَّمٍ وَ عَلَى الْعَاقِلِ أَنْ يَکُونَ بَصِيراً بِزَمَانِهِ مُقْبِلًا عَلَى شَأْنِهِ حَافِظاً لِلِسَانِهِ وَ مَنْ حَسَبَ کَلَامَهُ مِنْ عَمَلِهِ قَلَّ کَلَامُهُ إِلَّا فِيمَا يَعْنِيهِ‏.

قُلْتُ: يَا رَسُولَ اللَّهِ فَمَا کَانَتْ صُحُفُ مُوسَى ؟

قَالَ ـ صلي الله عليه و آله ـ :کَانَتْ عِبَراً کُلُّهَا عَجَبٌ لِمَنْ أَيْقَنَ بِالنَّارِ ثُمَّ ضَحِکَ عَجَبٌ لِمَنْ أَيْقَنَ بِالْمَوْتِ کَيْفَ يَفْرَحُ عَجَبٌ لِمَنْ أَبْصَرَ الدُّنْيَا وَ تَقَلُّبَهَا بِأَهْلِهَا حَالًا بَعْدَ حَالٍ ثُمَّ هُوَ يَطْمَئِنُّ إِلَيْهَا عَجَبٌ لِمَنْ أَيْقَنَ بِالْحِسَابِ غَداً ثُمَّ لَمْ يَعْمَلْ‏.

قُلْتُ: يَا رَسُولَ اللَّهِ فَهَلْ فِي الدُّنْيَا شَيْ‏ءٌ مِمَّا کَانَ فِي صُحُفِ إِبْرَاهِيمَ وَ مُوسَى ع مِمَّا أَنْزَلَهُ اللَّهُ عَلَيْکَ؟

قَالَ ـ صلي الله عليه و آله ـ : اقْرَأْ يَا أَبَا ذَرٍّ «قَدْ أَفْلَحَ مَنْ تَزَکَّى* وَ ذَکَرَ اسْمَ رَبِّهِ فَصَلَّى* بَلْ تُؤْثِرُونَ الْحَياةَ الدُّنْيا* وَ الْآخِرَةُ خَيْرٌ وَ أَبْقى‏* إِنَّ هذا (يَعْنِي ذِکْرَ هَذِهِ الْأَرْبَعِ الْآيَاتِ ) لَفِي الصُّحُفِ الْأُولى‏* صُحُفِ إِبْراهِيمَ وَ مُوسى‏.»

قُلْتُ: يَا رَسُولَ اللَّهِ أَوْصِنِي.

قَالَ ـ صلي الله عليه و آله ـ : أُوصِيکَ بِتَقْوَى اللَّهِ فَإِنَّهُ رَأْسُ أَمْرِکَ کُلِّهِ.

فَقُلْتُ: يَا رَسُولَ اللَّهِ زِدْنِي.

قَالَ ـ صلي الله عليه و آله ـ :عَلَيْکَ بِتِلَاوَةِ الْقُرْآنِ وَ ذِکْرِ اللَّهِ عَزَّ وَ جَلَّ فَإِنَّهُ ذِکْرٌ لَکَ فِي السَّمَاءِ وَ نُورٌ فِي الْأَرْضِ‏.

قُلْتُ: يَا رَسُولَ اللَّهِ زِدْنِي.

قَالَ ـ صلي الله عليه و آله ـ :عَلَيْکَ بِالْجِهَادِ فَإِنَّهُ رَهْبَانِيَّةُ أُمَّتِي‏.

قُلْتُ: يَا رَسُولَ اللَّهِ زِدْنِي.

قَالَ ـ صلي الله عليه و آله ـ : عَلَيْکَ بِالصَّمْتِ إِلَّا مِنْ خَيْرٍ فَإِنَّهُ مَطْرَدَةٌ لِلشَّيْطَانِ عَنْکَ وَ عَوْنٌ لَکَ عَلَى أُمُورِ دِينِکَ‏.

قُلْتُ: يَا رَسُولَ اللَّهِ زِدْنِي.

قَالَ ـ صلي الله عليه و آله ـ :إِيَّاکَ وَ کَثْرَةَ الضَّحِکِ فَإِنَّهُ يُمِيتُ الْقَلْبَ وَ يَذْهَبُ بِنُورِ الْوَجْهِ‏

قُلْتُ: يَا رَسُولَ اللَّهِ زِدْنِي .

قَالَ ـ صلي الله عليه و آله ـ : انْظُرْ إِلَى مَنْ هُوَ تَحْتَکَ وَ لَا تَنْظُرْ إِلَى مَنْ هُوَ فَوْقَکَ فَإِنَّهُ أَجْدَرُ أَنْ لَا تَزْدَرِيَ نِعْمَةَ اللَّهِ عَلَيْکَ.

قُلْتُ :يَا رَسُولَ اللَّهِ زِدْنِي.

قَالَ ـ صلي الله عليه و آله ـ :صِلْ قَرَابَتَکَ وَ إِنْ قَطَعُوکَ وَ أَحِبَّ الْمَسَاکِينَ وَ أَکْثِرْ مُجَالَسَتَهُمْ‏

قُلْتُ :يَا رَسُولَ اللَّهِ زِدْنِي.

قَالَ ـ صلي الله عليه و آله ـ :قُلِ الْحَقَّ وَ إِنْ کَانَ مُرّاً.

قُلْتُ :يَا رَسُولَ اللَّهِ زِدْنِي.

قَالَ ـ صلي الله عليه و آله ـ :لَا تَخَفْ فِي اللَّهِ لَوْمَةَ لَائِمٍ‏.

قُلْتُ :يَا رَسُولَ اللَّهِ زِدْنِي.

قَالَ ـ صلي الله عليه و آله ـ :يَا أَبَا ذَرٍّ لِيَرُدَّکَ عَنِ النَّاسِ مَا تَعْرِفُ مِنْ نَفْسِکَ وَ لَا تجر [تَجِدْ ]عَلَيْهِمْ فِيمَا تَأْتِي فَکَفَى بِالرَّجُلِ عَيْباً أَنْ يَعْرِفَ مِنَ النَّاسِ مَا يَجْهَلُ مِنْ نَفْسِهِ وَ يجر [يَجِدَ] عَلَيْهِمْ فِيمَا يَأْتِي.

قَالَ ابو ذر: ثُمَّ ضَرَبَ عَلَى صَدْرِي وَ قَالَ: يَا أَبَا ذَرٍّ لَا عَقْلَ کَالتَّدْبِيرِ وَ لَا وَرَعَ کَالْکَفِّ عَنِ الْمَحَارِمِ وَ لَا حَسَبَ کَحُسْنِ الْخُلُق‏.[1]

ترجمہ:

ميں نے کہا : کون سا جہاد بھتر ہے؟ 

فرمايا : وہ جہاد جسميں مومن کا بہايا جائے اور اس گھوڑا بھاگ جائے.

ميں نے کہا : قران کي کون سي ايت بڑي ہے ؟

فرمايا : آية الکرسى.

ميں نے کہا : صحف ابراهيم کيا ہے؟

فرمايا : مثالوں کا مجموعہ تھا ، جيسے « مقتدر بادشاہ ھم نےتمھيں اس لئے نہيں بھيجا تھا کہ مال دنيا کو جمع کرو بلکہ تمھيں اس لئے بھيجا تھا کہ مظلوم کي فرياد رسي کرو کہ ھم مظلوم کي دعا کو رد نہيں کرتے چاھے کافريا فاجر ہو.

ان مثالوں ميں مذکور ہے « جب تک عقلمند کے پاس عقل ہے ضروري ہےکہ کچھ وقت  اپنے پروردگار سے راز و نياز کے لئے مخصوص کر ے اورکچھ اپنےاعمال کي حسابرسي کے لئے، اور جو کچھ خداوند نے اس کے حق ميں انجام ديا ہے ، اور کچھ اس کي جلالت سے مستفيد ہونے کے ئے خلوت اختيار کرے. عاقل ان تين حالت کے علاوہ کسي اور حالت کو نہ اپنائے، يا اخرت کے لئے ذخيرہ اکٹھا کرے ، يا حلال روزي کسب کرے ، يا حلال چيزوں سے لطف لے ، اور عاقل زمانے کے حالات سے اگاہ رہے اور اپنے کام ميں مشغول رہے ، اپني زبان اپنے اختيار ميں رکھے ، جو بھي باتوں کو اپنے اعمال ميں حساب کرے گا فقط ضرورت کے وقت کلام کرے گا .


 ميں نے کہا : يا رسول اللہ صحف موسى کس سلسلے ميں تھا ؟

فرمايا : عبرتوں کا مجموعہ تھا : « تعجب ہے اس پر، جسے جھنم پر يقين ہے پھرکس طرح ہنستا ھے ، تعجب ہے اس پر، جسے موت کا يقين ہے پھر کس طرح خوش رھتا ہے ، بھت تعجب ہے اس پر کہ دنيا کي تبديلوں سے اگاہ ہے مگر اس سے دل لگاتا ہے اور مطمئمن رہتاہے  بھت تعجب ہے اس پر کہ کل کے حساب پر ايمان رکھتا ہے اور عمل نہي کرتا .

پوچھا : يا رسول الله! کيا صحف ابراهيم و موسى کي بچي ہوئي کچھ چيزيں اپ پر نازل کي گئيں ؟

فرمايا : پڑھو ، کامياب ہے وہ جو خود کا تذکيہ کرے ، نام خدا کو ياد رکھے ، نماز پڑھے ، دنيا کو اخرت کا وسيلہ قرار دے کيونکہ وہ باقي رہنے والي ہے  يہ چار ايتيں صحف ابراهيم و موسى ميں بھي موجود تھيں .

 ميں نے کہا : يا رسول الله!  ھميں نص?يحت کريں .

فرمايا : تمھ?يں تقوي الھي کي سفارش کرتا ہوں کہ تمام کام کي اساس ہے.

ميں نے کہا : يا رسول الله! مزيد فرمائيں.

فرمايا: تلاوت قرآن و ذکر خداوند عزّ و جل کرو کہ تلاوت قرآن اسمان ميں ذکر اور زمين مين نور ہے.

ميں نے کہا : يا رسول الله! مزيد فرمائيں.

فرمايا: جھاد کوپيشہ کرو کہ جھاد ميري امت کي رهبانيّت ہے.

ميں نے کہا : يا رسول الله! اور فرمائيں.

فرمايا : اچھائي کے علاوہ سکوت اختيار کرو کہ يہ کام شيطان کو تم سے دور اور تمھيں نيک کام ميں مدد کرے گا .

ميں نے کہا : يا رسول الله! اور فرمائيں.

فرمايا : زيادہ ھسنے سے پرھيز کرو کہ دل کے مردہ ہونے اور چھرے کے نور ميں کمي کا سبب ہے .

ميں نے کہا : يا رسول الله! اور فرمائيں.

فرمايا : اپنے سے نيچے والوں کو ديکھو اور اپنے سے اوپر والوں کو نہ ديکھو ، کہ يہ بھترين طريقہ ہے کہ خداکي دي ہوئي نعمت کو کم نہ جانو.

ميں نے کہا : يا رسول الله! اور فرمائيں.

فرمايا : رشتہ داروں کے ساتھ ص?لہ رحم کرو ، مسکينوں سے محبت کرو اورا نکے ساتھ نشست و بر خاست رکھو .

ميں نے کہا : يا رسول الله! اور فرمائيں.

فرمايا: ھميشہ حق بولو اگرچہ تلخ ہو.

ميں نے کہا : يا رسول الله! اور فرمائيں.

فرمايا: خدا کي راہ ميں لوگوں کي ملامت سے نہ ڈرو.

ميں نے کہا : اور فرمائيں.

فرمايا: اپنے عيوب کو لوگوں کي عيب جوئي کے لئے بچائے رکھو اور جو کچھ بھي کرتے ہوں ان پر عيب نہ نکالو ، فقط يھي عيب انسان کے لئے کافي ہے کہ لوگوں ميں عيب ديکھتا ہے اور اپنے ميں نہي ديکھتا .

اورپھر اپ نےميرے سينے پر ھاتھ رکھ کر فرمايا : تدبير کے مانند عقل ، گناہ سے بچنے کے مانند تقوي ، اور خوش خويى سے اچھي کوئي چيز نہي.

--------------------------------------------------------------------------------

[1] . رضى الدين، حسن بن فضل طبرسى؛ مکارم الأخلاق، ص472- 473؛ انتشارات شريف رضى ، قم، چهارم، 1370 ش.

 

تبصرہ بھیجیں
نام:
ایمیل:
* ‫نظریہ‬:
‫برای‬ مہربانی اپنے تبصرے میں اردو میں لکھیں.
‫‫قوانین‬ ‫ملک‬ ‫و‬ ‫مذھب‬ ‫کے‬ ‫خالف‬ ‫اور‬ ‫قوم‬ ‫و‬ ‫اشخاص‬ ‫کی‬ ‫توہین‬ ‫پر‬ ‫مشتمل‬ ‫تبصرے‬ ‫نشر‬ ‫نہیں‬ ‫ہوں‬ ‫گے‬