01 May 2011 - 14:08
‫نیوز‬ ‫کوڈ‬: 2722
فونت
رسا نيوز ايجنسي ـ اھل سنت علماء تنظيم عراق کے صدر نے افغانستان ميں گوتم بودھ کے مجسمہ کو نہ ٹوڑے جانے کے سلسلہ ميں قرضاوي کي مداخلت پر تنقيد کرتے ہوئے بحرين ميں مساجد کي مسماري پر خاموشي کے سلسلہ ميں اظہار افسوس کيا ?
شيخ خالد عبدالوهاب الملا

رسا نيوز ايجنسي کي رپورٹ کے مطابق عراق کے اھل سنت علماء تنظيم کے صدر شيخ خالد عبدالوهاب الملا نے اپنا ايک پيغام عالمي مسلم علماء متحدہ کے جنرل سيکريٹري شيخ يوسف القرضاوي کے لئے بھيجا ہے جس ميں ان سے بحرين ميں ہو رہے مساجد کي مسماري پر اپنا موقف بيان کرنے اور بحرين کي مظلوم عوام کے قتل عام کي مذمت کرنے کا مطالبہ کيا ہے ?

اس پيغام ميں بيان کيا گيا ہے : شيخ يوسف قرضاوي کو چاہيئے کہ اپنا ايک بيانيہ صادر کريں اور بحرين کي حکومت سے مساجد کي نابودي اور مسلمانوں کے قتل عام کو روکنے کي تاکيد کريں ، مظلوم جوانوں پر پھانسي کے ظالمانہ حکم کو ختم کريں اور قوم کے مطالبہ کو معتدل صورت ميں جلد از جلد پوري کريں ?

انہوں نے وضاحت کي : قرضاوي نے گذشتہ سال افغانستان ميں طالبان کے ذريعہ گوتم بودھ کے مجسمہ کو طالبان کے ذريعہ تورے جانے پر مداخلت کي تھي اور اس کے توڑنے نہ جانے کا مطالبہ کيا تھا ، وہ مساجد اور مجسمہ کے درميان فرق جانيں اور ابھي بھي مساجد کي مسماري کے سلسلہ ميں اپنا موقف واضح کريں ?

شيخ خالد الملا نے وضاحت کي : اس طرح علماء کا موقف اسلامي اتحاد کے وسعت کا سبب ہوگي اور غيروں و اسلام کے دشمنوں کي دخالت ختم ہوگي اور اسي طرح بحرين ميں ا?پسي و مذھبي اختلاف کا زوال اور ا?پسي اتحاد و محبت رائج ہونے ميں مدد مليگي ?
تبصرہ بھیجیں
نام:
ایمیل:
* ‫نظریہ‬:
‫برای‬ مہربانی اپنے تبصرے میں اردو میں لکھیں.
‫‫قوانین‬ ‫ملک‬ ‫و‬ ‫مذھب‬ ‫کے‬ ‫خالف‬ ‫اور‬ ‫قوم‬ ‫و‬ ‫اشخاص‬ ‫کی‬ ‫توہین‬ ‫پر‬ ‫مشتمل‬ ‫تبصرے‬ ‫نشر‬ ‫نہیں‬ ‫ہوں‬ ‫گے‬