07 July 2012 - 19:07
‫نیوز‬ ‫کوڈ‬: 4313
فونت
آيت ‌الله مکارم شيرازي:
رسا نيوزايجنسي - حضرت آيت ‌الله مکارم شيرازي نے عدالت کے بغير انساني معاشرے کو جھلستے صحرا کے مانند بتاتے ہوئے کہا : امام عصر جھلستے صحرا ميں اب حيات کے مانند ہيں جو دنيا کو عدل وانصاف سے بھر ديں گے ?
حضرت آيت‌الله مکارم شيرازي

رسا نيوزايجنسي کے رپورٹر کي رپورٹ کے مطابق ، مراجع تقليد قم ميں سے حضرت آيت ‌الله ناصر مکارم شيرازي نے گذشتہ شب حرم امام رضا عليہ السلام کے زائرين اور مجاورين کو خطاب ميں يہ کہتے ہوئے کہ امام زمانہ (عج) جھلستے صحرا ميں اب حيات کے مانند ہيں بيان کيا : جيسا کہ ھم دنيا ميں شاھد ہيں کہ انساني معاشرہ عدالت کے بغير جھلستے صحرا کي طرح ہے ، سامراجيت وا?مريت عدالت کے نام پر ظلم کررہے ہيں ?

انہوں نے انساني حقوق کے معياروں کو تنقيد کا نشانہ بناتے ہوئے کہا : امريکا اور عالمي سامراجيت معتقد ہيں کہ جو کوئي بھي ان کے ساتھ ہو وہ صلح پسند ہے اور جو کوئي بھي ان کے ساتھ نہ ہو وہ دھشت گرد ہے اور وہ صفحہ ھستي سے مٹ جانے کا مستحق ہے ، مگر سعوديہ جيسي حکومتيں جو ائين جمھوريت کے مطابق نہيں اور ان کے يہاں اليکشن و پارليمنٹ بھي موجود نہيں ہے عالمي سامراجيت کے مورد حمايت ٹھہرے ہيں ?

حضرت آيت الله مکارم شيرازي نے روشن طورسے کہا : بعض ايات قران کريم ڈائرکٹ يا اِن ڈائرکٹ ظھور امام عصر ارواحنا فداہ اور اسلام کے عام ہونے پر دلالت کرتي ہيں ؛ من جملہ ان ايات ميں سے سوره انبيا کي 15 ويں ايت ، سوره قصص کي پانچويں ايت ، سوره توبہ کي 23 ويں ايت ميں اس بات کي تاکيد کي گئي ہے کہ نہايتا زمين پر صالحين خدا کا قبضہ ہوگا ?

اس مرجع تقليد نے مزيد کہا : معصومين عليھم السلام نے بعض ايات کريمہ کي تفسير ميں قيام منجي موعود کي جانب اشارہ کيا ہے ? جيسے سورہ ملک کي ايت 30 ميں ، اگرچہ ان ايات ميں بظاھر توحيد پرودگار کي گفتگو کي گئي ہے مگر باطني طور پر ولايت وقيام امام زمانہ (عج) کي جانب اشارہ ہے اور وہ يہ کہ اگر انساني معاشرہ کا اب حيات ، معصوم ھماري نظروں سے اوجھل ہوجائے تو کون ھميں خيرت وبرکت عنايت کرے گا ?

انہوں نے کہا : متوجہ رہيں کہ پيدوار اورابادي ميں فقط پاني کافي نہيں ہے بلکہ زمين بھي تيار ہوني چاھئے اور بيج بونا بھي بہت ضروري ہے ، انساني اخلاق کي بيج دل و روح کي زمين ميں بوکر روح وجان کو درپيش مصيبتوں سے نجات دي جاتي ہے ?

حضرت آيت‌الله مکارم شيرازي نے بيان کيا : امام عصر عليہ السلام کي ياد ميں محفلوں اور دعاوں کا انعقاد اچھي بات ہے مگر کافي نہيں ہے ھم سب کي ذمہ داري ہے کہ اپني ، اپنے گھرانے اور اپنے معاشرے ميں اصلاح کے پودے اگائيں تاکہ ظھور امام عصر(عج) اور اب حيات کے انے کے ساتھ ساتھ يہ پودے پھل دے سکيں ?
تبصرہ بھیجیں
نام:
ایمیل:
* ‫نظریہ‬:
‫برای‬ مہربانی اپنے تبصرے میں اردو میں لکھیں.
‫‫قوانین‬ ‫ملک‬ ‫و‬ ‫مذھب‬ ‫کے‬ ‫خالف‬ ‫اور‬ ‫قوم‬ ‫و‬ ‫اشخاص‬ ‫کی‬ ‫توہین‬ ‫پر‬ ‫مشتمل‬ ‫تبصرے‬ ‫نشر‬ ‫نہیں‬ ‫ہوں‬ ‫گے‬