10 January 2015 - 22:15
‫نیوز‬ ‫کوڈ‬: 7673
فونت
حجت الاسلام مبشر حسن شہیدی:
رسا نیوز ایجنسی – مجلس وحدت مسلمین پاکستان کراچی کے ڈپٹی جنرل سکریٹری نے اس بات کی جانب اشارہ کرتے ہوئے کہ سن 2015ء کے پہلے ہفتے میں 5 شیعہ مسلمان شہید کئے جاچکے ہیں کہا: سیاست و مذہب کی آڑ میں تکفیریت کو پروان چڑھانا پاکستان اور پاکستانیوں سے دشمنی کی نشانی ہے ۔
مجلس وحدت مسلمين پاکستان کي پريس کانفرنس

 

رسا نیوز ایجنسی کی رپورٹ کے مطابق، مجلس وحدت مسلمین پاکستان کراچی کے ڈپٹی جنرل سکریٹری حجت الاسلام مبشر حسن شہیدی نے کراچی کے پاک محرم ہال میں پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئےعید میلاد النبی(ص) کے پروگرام میں خودش حملہ کہ جو متعدد افراد کی شھادت و زخمی ہونے کا سبب بنا شدید مذمت کی ۔


اس پریس کانفرنس میں آئی ایس او کراچی ڈویژن کے جنرل سکریٹری غیور عباس عابدی، مجلس وحدت مسلمین کے رہنماعلی انور جعفری، احسان دانش، صادق جعفری اور ناصر حسینی بھی موجود تھے ۔


انہوں نے یہ کہتے ہوئے کہ جس جس نے بھی طالبان اور ان کے اتحادی کالعدم دہشت گرد گروہوں کی حمایت کی ہے ان سب کو ان گروہوں کے بدنام زمانہ دہشت گردوں کی طرح مشتہر کرکے گرفتار کیا جائے اور انہیں بھی ان کی معاونت کرنے کے جرم میں پھانسی دی جائے کہا: سیاست و مذہب کی آڑ میں تکفیریت کو پروان چڑھانا پاکستان اور پاکستانیوں سے دشمنی کی نشانی ہے ۔


حجت الاسلام شہیدی نے یہ کہتے ہوئے کہ راولپنڈی امام بارگاہ میں خودکش دھماکہ سانحہ پشاور کا ہی تسلسل تھا، راولپنڈی امام بارگاہ میں دھماکہ کرکے بے گناہ مسلمانوں کا خون بہانے والے مدارس ہی کی پیداوار ہیں، یہ سیکولر یا لبرل لوگ نہیں ہیں بلکہ مذہبی شناخت رکھتے ہیں کہا: یہ پاکستان میں موجود بعض مدارس سے تعلیم حاصل کرنے والے تکفیری ہیں، کوئی لاکھ کوشش کرے لیکن ان کے تعلیمی بیک گراؤنڈ پر نقاب نہیں ڈالی جاسکتی ۔


انہوں نے کہا : کل شب سرور کائنات حضور پرنور خاتم الانبیاء حضرت محمد مصطفی (ص)کے عاشقوں کو عید میلاد النبی (ص) کا جشن منانے کی سزا دی گئی، آٹھ مسلمان صرف اس جرم میں شہید کردیئے گئے کہ انہوں نے عالم اسلام کی ہی نہیں بلکہ عالم انسانیت کی سب سے بڑی عید منائی، ہمیں فخر ہے کہ ان عظیم شہداء کا تعلق مکتب آل محمد ؑ سے ہے، جس طرح علی رضا تقوی نے ناموس رسالت پر جان قربان کی، آج پھر شمع رسالت (ص) کے پروانوں نے دیوانہ وار جام شہادت نوش کیا ہے، یہ فضیلت اپنی جگہ لیکن اس سے کوئی قاتل دہشت گردوں کی مذمت کرنے سے غافل نہ ہو، ہم اس عظیم عید پر حملہ آور تکفیری دہشت گردوں کی مذمت کرتے ہیں خواہ ان کا نام طالبان ہو یا بدل کر جماعت الاحرار رکھ دیا جائے، نام بدلنے سے یہ اپنے سیاہ چہروں اور انسانیت دشمن اعمال کو چھپا نہیں سکتے۔

 

شہیدی نے تاکید کی : پاکستان کے ان غیرت مند فرزندوں پر سلام کہ جو اسلام اور پاکستان کے دفاع کی جنگ لڑ تے ہوئے شہید ہورہے ہیں، ان شہداء نے بھی سانحہ پشاور کے معصوم شہید بچوں کی طرح قاتلوں کی اسلام دشمنی سے نقاب ہٹادی ہے، یہ سانحہ پشاور کا ہی تسلسل تھا، چٹیاں ہٹیاں عون رضوی امام بارگاہ میں بم دھماکہ کرنے والے دہشت گردوں نے خود ہی ذمہ داری قبول کرکے اپنا اور اپنے مکتب کا تعلق بیان کردیا ہے، یہ لوگ مدارس ہی کی پیداوار ہیں، یہ سیکولر یا لبرل لوگ نہیں ہیں، یہ پاکستان میں موجود بعض مدارس سے تعلیم حاصل کرنے والے تکفیری ہیں، کوئی لاکھ کوشش کرے لیکن ان کے تعلیمی بیک گراؤنڈ پر نقاب نہیں ڈالی جاسکتی، مدارس سے وابستہ بعض مولویوں نے ہی ان کی جانب سے حکومت سے مذاکرات بھی کئے، مدارس سے وابستہ اہم اور نامور شخصیات ہی ان تکفیریوں کی پشت پناہی میں پیش پیش نظر آیا کرتے تھے، پاکستانیوں کی یادداشت میں ابھی وہ مناظر موجود ہیں۔

 

انہوں نے کہا : جناب حسن ترابی کو شہید کرنے والا قاتل دہشت گرد بھی کراچی کے ایک مدرسے کا طالبعلم تھا، میاں چنوں میں ایک مدرسے کے اندر دھماکہ خیر مواد دھماکے سے پھٹ گیا تھا تو پاکستانیوں کو معلوم ہوا تھا کہ مدارس دہشت گردی کے لئے اسلحہ اور ایمونیشن چھپانے کے لئے بھی استعمال ہوتے ہیں، پچھلے سال اپریل میں ایک انگریزی اخبار نے رپورٹ شایع کی کہ راولپنڈی اسلام آباد کے بعض مدارس دہشت گردوں کی پناہ گاہ ہیں اور ان میں دو مولویوں کے اور ان کے مدارس کے نام بھی شایع کئے گئے تھے، بعض مدارس کا دہشت گردی میں ملوث ہونا کب تک چھپایا جاتا رہے گا؟ ہمارا مطالبہ ہے کہ ایسے تمام مدارس اور مساجد جو مسجد ضرار کی طرح دہشت گردوں کی پناہ گاہ بنی ہوئی ہیں، ان کے خلاف بلا تاخیر کارروائی کا آغاز کیا جائے اور ایسے مدارس اور مساجد کا دفاع کرنے والے مولوی نما حضرات کو بھی تحفظ پاکستان ایکٹ اور دیگر قوانین کے مطابق پکڑ کر مقدمہ چلائیں، جس جس نے بھی طالبان اور ان کے اتحادی کالعدم دہشت گرد گروہوں کی حمایت کی، ان سب کو ان گروہوں کے بدنام زمانہ دہشت گردوں کی طرح مشتہر کرکے گرفتار کیا جائے اور انہیں بھی ان کی معاونت کرنے کے جرم میں پھانسی دی جائے، ہمارا مطالبہ ہے کہ انہیں سرعام سزائے موت دی جائے۔

 

شہیدی نے بیان کیا : مدارس دہشت گردی میں ملوث ہیں، اس کا اعتراف تو وفاقی وزیر داخلہ چوہدری نثار علی خان بھی علی الاعلان کرچکے ہیں، چٹیاں ہٹیاں امام بارگاہ میں عاشقان رسول اعظم (ص) کے اجتماع کو بم کا نشانہ بنانا کوئی الگ واقعہ نہیں بلکہ ملک بھر اور خاص طور کراچی میں جاری شیعہ نسل کشی کا تسلسل ہی ہے، کراچی شہر میں سال 2015ء کے پہلے ہفتے میں 5 شیعہ مسلمان شہید کئے جاچکے ہیں، انہیں تکفیری دہشت گردوں نے ہدف بناکر قتل کیا ہے، یہ دہشت گرد آج بھی آزاد ہیں اور شہداء کے ورثاء کو ملک بھر میں دھمکیاں دیتے ہیں کہ قاتلوں سے صلح کرلو، انہیں معاف کردو ورنہ تمہیں بھی قتل کردیا جائے گا، چٹیاں ہٹیاں امام بارگاہ پر دہشت گرد حملے سے قبل اسی نوعیت کی دھمکیاں دی گئی تھیں، ہم مطالبہ کرتے ہیں کہ کالعدم تکفیری دہشت گرد گروہ کے ہر فرد کو سزائے موت دی جائے اور ان پر اسلامی و پاکستانی قوانین کا اطلاق کیا جائے، ان سے قصاص لیا جائے اور اس راہ میں کوئی رکاوٹ برداشت نہ کی جائے۔

 

انہوں ںے ذکر کیا : ہم پرنٹ اور الیکٹرانک میڈیا کے مالکان اور ذمہ داران، اے پی این ایس، سی پی این ای، پیمرا سمیت سارے متعلقین سے مطالبہ کرتے ہیں کہ کالعدم دہشت گرد گروہوں اور ان کی حمایت کرنے والوں کو بے نقاب کریں، ان کی میڈیا پروجیکشن نہ کریں، ہم مطالبہ کرتے ہیں کہ ان دہشت گردوں کے موقف کو اس طرح پیش کریں کہ قوم کے سامنے ان کے کالے کرتوت آشکار ہوں نہ کہ انہیں ہیرو بناکر پیش کیا جائے، ان دونوں چیزوں میں فرق ہے، مثال کے طور پر دہشت گرد خود کو مسلمان اور اپنے مخالفین کو کافر یا اسلام دشمن کہتے ہیں تو ہرگز ان کا باطل موقف پیش نہ کیا جائے بلکہ دنیا کو بتایا جائے کہ یہ اسلام کے دشمن انسانیت کے دشمن دہشت گردوں کا موقف ہے، اگر ذرائع ابلاغ نے دہشت گردوں کی میڈیا پروجیکشن کی تو پھر اکیسویں آئینی ترمیم کے بعد وہ بھی دہشت گردوں کی اعانت کرنے والوں میں شمار کئے جاسکتے ہیں اور ان کے خلاف بھی کارروائی کی جاسکتی ہے، امید ہے کہ صحافت کی آزادی کا درست استعمال کیا جائے گا اور اسے تکفیری دہشت گردوں کی اسلام دشمنی اور انسانیت دشمنی کو بے نقاب کرنے کے لئے استعمال کیا جائے گا۔

 

شہیدی نے بیان کیا: ہم پاکستان کے سارے سیاستدانوں سے اپیل کرتے ہیں کہ فوج عسکری محاذ پر جنگ لڑنے میں مصروف ہے اور سیاسی و مذہبی جماعتوں کو پاکستان کی نظریاتی جنگ لڑنا ہے، جو بھی سیاست یا مذہب کی آڑ میں تکفیری نظریہ کو پروان چڑھاتا ہے وہ پاکستان اور پاکستانیوں کا دشمن ہے، پاکستان کے بیس کروڑ عوام اس نظریاتی جنگ میں سیاسی قیادت کا ساتھ دینے کے لئے آمادہ ہیں اور قومی سیاسی قیادت کو اب اس جنگ کو کھل کر اونر شپ دینا ہوگی، نظریاتی محاذ پر دہشت گردوں سے لڑے بغیر یہ جنگ نہیں جیتی جاسکتی، ذرائع ابلاغ بھی اس نظریاتی جنگ کی فرنٹ لائن پر مورچہ زن ہو، اسلام اور پاکستان کے وسیع تر مفاد میں، انسانیت کے دفاع میں ہمیں پاکستان کے دفاع کی نظریاتی جنگ لڑنا ہوگی اور وقت آگیا ہے کہ ہم اس نظریاتی اور تبلیغاتی جنگ میں اپنے اپنے حصے کا کام کریں۔
 

تبصرہ بھیجیں
نام:
ایمیل:
* ‫نظریہ‬:
‫برای‬ مہربانی اپنے تبصرے میں اردو میں لکھیں.
‫‫قوانین‬ ‫ملک‬ ‫و‬ ‫مذھب‬ ‫کے‬ ‫خالف‬ ‫اور‬ ‫قوم‬ ‫و‬ ‫اشخاص‬ ‫کی‬ ‫توہین‬ ‫پر‬ ‫مشتمل‬ ‫تبصرے‬ ‫نشر‬ ‫نہیں‬ ‫ہوں‬ ‫گے‬