15 April 2020 - 18:54
‫نیوز‬ ‫کوڈ‬: 442516
فونت
آیت الله بشیر نجفی:
مرجع تقلید نجف اشرف نے کرونا کے پیش نظر مومنین کی جانب سے پوچھے گئے سوالات کے جواب میں کہا: اگرعلم ہو کہ روزہ، کرونا کا شکار ہونے کا سبب ہے تو روزہ توڑنا واجب ہے ۔

رسا نیوز ایجنسی کے رپورٹر کی عراق سے رپورٹ کے مطابق، مرجع تقلید نجف اشرف آیت الله بشیر نجفی نے کرونا پھیلنے کے پیش نظر امسال روزہ رکھنے کے سلسلے میں مومنین کی جانب سے کئے گئے استفتاء کے جواب میں کہا: اگر کسی کو علم ہو کہ روزہ رکھنے کی صورت میں کرونا کا شکار ہوجائے گا تو اس پر روزہ توڑنا واجب ہے۔

آیت الله بشیر نجفی نے بیان کیا: ڈاکٹر کی تحقیقات اس بات کی بیانگر ہیں کہ روزہ رکھنے اور کرونا کا شکار ہونے کے درمیان کوئی تعلق موجود نہیں ہے ۔

آیت الله بشیر نجفی نے ایات و روایات کی روشنی میں روزے کے فوائد کی جانب اشارہ کیا اور مزید کہا: حدیث نبوی میں ایا ہے کہ رسول اسلام(ص) نے ارشاد فرمایا کہ روزہ انسان کی سلامتی و تندرستی کا سبب ہے ، اس حوالے سے ضروری ہے کہ ماه مبارک رمضان کو بیماریوں خصوصا کرونا وائرس سے نجات کا وسیلہ قرار دیا جائے، اور ماه مبارک رمضان سے مکمل اور بخوبی استفادہ کیا جائے ۔

انہوں نے کہا: در حقیقت تو ہی اس معرفت کا مالک ومختار ہے جوتونے اس کےسلسلہ میں ہمیں عنایت فرمائی ہے اور اس کی سنت کی ہدایت دی ہے اور ہم نے تیری  توفیق ہی کے  ذریعہ سے اس کے روزےاور نمازکا بیڑہ اٹھایا ہے اگر چہ اس میں کوتاہیاں بھی ہوئی ہیں اور بہت سے حقوق میں   سےصرف  کچھ ہی کو ادا کرسکیں ہیں ۔ خدایا یہ تیری حمد اپنی برائیوں کے اور حقوق کی بربادی کے اعتراف کے ساتھ ہے ۔ تیرے لئے ہمارے دلوں میں واقعی شرمندگی ہے اور ہماری زبانوں پہ سچی معذرت ہے ۔ لہذا ہماری کوتاہیوں کے باوجود ہمیں وہ اجر عطافرما دے جس کے ذریعہ اس فضل کی بھر پائی ہو سکے جس کی آرزو تھی اور اسے ان ذخیروں کے انواع واقسام کا بدل قرار دے سکیں جن کی تمنا اور لالچ تھی ۔

واضح رہے کہ در حال حاضر پوری دنیا کرونا وائرس سے لڑ رہی رہے اور اسی کے پیش نظر عراق میں 17 مارچ سے لاک ڈاون کا اغاز ہوا ہے جو 18 اپریل کو ختم ہوگا۔/۹۸۸/ن

منتشر شده: ۱
زیر غور: ۰
نام مولاناپیرعلی لاشاری قمی
Pakistan
11:53 - 2020/04/20
سوالات عنوان :بیماری شوگر ھارٹ اٹیک اور مرض تنفس دمہ الرجی و شدت پیاس :بخدمت جناب ایتہ اللہ حافظ بشیرحسین نجفی اسلام علیکم یاعلی مدد قبلہ جناب اپکی خدمت مین درج سوالات ترسیل ھین امیدکرتاھون کہ انکے جوابات سے مستفید فرمائینگے والسلام مولاناپیرعلی جعفری قمی :عنوانات سوالات: سوال ا اگرکوئی ایسا مریض جو شوگر اور ھارٹ اٹیک کامریض ھو اور ساتھ الرجی دمہ یعنے سانس کامریض بھی ھو جسکی وجہ سے روزہ نہ رکھ سکتاھو اگرروزہ رکھتا ہے تو مرض بڑھنے کا خدشہ ھے شدت پیاس کی وجہ سے روزہ مین مشکلات جان کاخطرہ بڑھنے کا خدشہ ھے اورہاے بلڈ پریشر اورلوبلڈ پریشر کی وجہ سے بے ہوشی کاخطرہ بڑھتاھے اگر ایسامریض کچھ سالون ے روزہ نہ رکھ سکتاھو ورزیر علاج بھی ھو وففہ سے ادوایات بھی کھانی پڑتی ھے ایندہ اس رمضان مین مرض بڑھنے کاخطرہ ھے ایک مدطعام کی استطاعت بھی نہ ھو دوسرا اور زرعی ماش بھی نہ سواے پیشنمازی کے تو وہ عالم جو ان امراض کاشکارھو توکیا کرے
تبصرہ بھیجیں
نام:
ایمیل:
* ‫نظریہ‬:
‫برای‬ مہربانی اپنے تبصرے میں اردو میں لکھیں.
‫‫قوانین‬ ‫ملک‬ ‫و‬ ‫مذھب‬ ‫کے‬ ‫خالف‬ ‫اور‬ ‫قوم‬ ‫و‬ ‫اشخاص‬ ‫کی‬ ‫توہین‬ ‫پر‬ ‫مشتمل‬ ‫تبصرے‬ ‫نشر‬ ‫نہیں‬ ‫ہوں‬ ‫گے‬