23 January 2013 - 17:31
‫نیوز‬ ‫کوڈ‬: 5033
فونت
اسلامي پارليہ مينٹ ايران کے اسپيکر :
رسا نيوز ايجنسي ـ اسلامي پارليہ مينٹ ايران کے اسپيکر نے اسلامي دنيا ميں رونما ہونے والے حاليہ تبديلي کو اسلام کے جمہوري نظام کے نقطہ نظر سے ايک تحسين انگيز تحريک جانا ہے اور وضاحت کي : اسلامي دنيا ميں تبديلي جو کہ تلاش آزادي، آزادي اور اسلام کي حد تک ہے جس کي نمايش بڑي طاقت کے لئے مشکلات کا سبب بني ہوئي ہے ?
دکتر علي لاريجاني علي لاريجاني

رسا نيوز ايجنسي کي رپورٹ کے مطابق اسلامي پارليہ مينٹ ايران کے اسپيکر دکتر علي لاريجاني نے اپنے تقرير ميں بيان کيا : حاليہ برسوں ميں عالمي حالات ايکبروويي دنيا کے ريڈيکل نظريات اور اقتصادي اور انساني اخراجات کے ساتھ کثير قطبي ڈھانچہ کي طرف بڑھ رہي ہے.

اسلامي پارليہ مينٹ ايران کے اسپيکر نے اس تاکيد کے ساتھ کہ اسلامي ممالک اس سلسلہ ميں دو حالت اختيار کر سکتي ہے بيان کيا : پہلي وہ حالت جو اسلامي ممالک اختيار کر سکتي ہے وہ يہ ہے کہ ايک تاثير گذار قطب کي طرف حرکت کے لئے ايک دوسرے کے ساتھ يکجہتي قائم رکھيں ?

دکتر علي لاريجاني نے دوسري حالت کو بيان کرتے ہوئے کہا : دوسريے نکتہ نظر کے مطابق يہ کہ ممکن ہے اسلامي ممالک مصنوعي ستارہ کي صورت ميں بين الاقوامي قطب کي پيروي پر عمل کريں يہ ہے کہ اتحاد سے دور ہو جائيں ?

انہوں نے وضاحت کي : يہ حالت اصل ميں سرد جنگ کے حالات پر تکرار ہوتا ہے اور البتہ يہ زمانہ کي تبديليوں کا مقتضي ہے ?
تبصرہ بھیجیں
نام:
ایمیل:
* ‫نظریہ‬:
‫برای‬ مہربانی اپنے تبصرے میں اردو میں لکھیں.
‫‫قوانین‬ ‫ملک‬ ‫و‬ ‫مذھب‬ ‫کے‬ ‫خالف‬ ‫اور‬ ‫قوم‬ ‫و‬ ‫اشخاص‬ ‫کی‬ ‫توہین‬ ‫پر‬ ‫مشتمل‬ ‫تبصرے‬ ‫نشر‬ ‫نہیں‬ ‫ہوں‬ ‫گے‬