02 March 2016 - 15:01
‫نیوز‬ ‫کوڈ‬: 9129
فونت
حجت الاسلام و المسلمین سید حسن نصراللہ:
رسا نیوز ایجنسی - حزب اللہ لبنان کے جنرل سکریٹری نے علاقے میں سعودی عرب اور اسرائیل کے مشترکہ مقاصد کی طرف اشارہ کرتے ہوئے کہا: علاقے کو مسلکی فتنے کی آگ میں جھوکنا سعودیوں اور صھیونیوں کا مشترکہ منصوبہ ہے ۔
حجت الاسلام و المسلمين سيد حسن نصراللہ

 

رسا نیوز ایجنسی کی رپورٹ کے مطابق، حزب اللہ لبنان کے جنرل سکریٹری حجت الاسلام والمسلمین سید حسن نصراللہ نے گذشتہ شب اپنے بیان میں سعودی عرب پر الزام لگاتے ہوئے کہ وہ لبنان میں بحران پیدا کرنے کے لیے اس ملک پر سیاسی حملے کر رہا ہے کہا: علاقے کو مسلکی فتنے کی آگ میں جھوکنا سعودیوں اور صھیونیوں کا مشترکہ منصوبہ ہے ۔


انہوں نے یہ بیان کرتے ہوئے کہ سعودی عرب کی جانب سے لبنانی فوج کی مالی مدد ختم کیے جانے کے بعد ہم ، لبنان اور علاقے پر سعودیوں اور خلیج فارس کے بعض عرب ممالک کی جانب سے وسیع پیمانے پر سیاسی و تشہیراتی حملے کے شاھد رہے ہیں کہا: ان شدید سیاسی و تشہیراتی حملوں نے لبنان کو سیاسی و تشہیراتی حوالے سے سنگین بحران سے دوچار کردیا اور بعض سعودی چینلوں نے بھی حزب اللہ کے خلاف انتہائی توہین آمیز پروگرام نشر کئے ۔


حجت الاسلام والمسلمین نصراللہ نے لبنان کے سیاسی و سیکورٹی حالات کی طرف اشارہ کرتے ہوئے کہا: سعودیوں کے ان شدید حملوں کے دوران کئی باتیں اور دعوے کیے گئے ان میں سے ایک دعوی یہ تھا کہ حزب اللہ شیعہ اور سنی کے درمیان فتنہ و فساد ڈالنا چاہتی ہے۔


انہوں نے یہ بتاتے ہوئے کہ خلیج فارس کے بعض عرب ممالک نے حزب اللہ کے خلاف جھوٹی خبریں کیں کہا: خلیج فارس کے بعض عرب ممالک نے اپنے شہریوں کو لبنان سے نکل جانے کی ہدایت دی ۔


حزب اللہ لبنان کے جنرل سکریٹری نے سعودی عرب اور اسرائیل کے مشترکہ مقاصد کی طرف اشارہ کرتے ہوئے کہا : علاقے میں سعودی عرب کا منصوبہ فتنے کی آگ بھڑکانا ہے اور یہ اسرائیل کا منصوبہ بھی ہے۔ ہم اسلامی شعائر کی کسی بھی طرح کی توہین کو رد کرتے ہیں، یہ ایک غلطی ہی نہیں بلکہ گناہ بھی ہے۔ بعض گروہ امریکہ، سعودی عرب اور اسرائیل کی مدد و حمایت سے اس منصوبے پر کام کر رہے ہیں ۔


انہوں نے یہ اس بات پر زور دیتے ہوئے حزب اللہ اکیلے ہی مقابلے اور مزاحمت کرنے کی طاقت و توانائی اور آمادگی رکھتی ہے کہا: ہم اپنے کسی اتحادی سے نہیں چاہتے کہ وہ خود کو مشکل میں ڈالے۔ خلیج فارس کے عرب ممالک میں لبنان اور لبنانی عوام کے خلاف جو اقدامات بھی انجام دیے جا رہے ہیں ان کا واحد ہدف اور نشانہ حزب اللہ ہے۔ مگر ہم  اپنے موقف پر قائم ہیں حتی اگر ہم اکیلے اور تنہا بھی رہ جائیں تو بھی اپنے حق پر زور دیں گے۔
 

تبصرہ بھیجیں
نام:
ایمیل:
* ‫نظریہ‬:
‫برای‬ مہربانی اپنے تبصرے میں اردو میں لکھیں.
‫‫قوانین‬ ‫ملک‬ ‫و‬ ‫مذھب‬ ‫کے‬ ‫خالف‬ ‫اور‬ ‫قوم‬ ‫و‬ ‫اشخاص‬ ‫کی‬ ‫توہین‬ ‫پر‬ ‫مشتمل‬ ‫تبصرے‬ ‫نشر‬ ‫نہیں‬ ‫ہوں‬ ‫گے‬