30 March 2014 - 17:30
‫نیوز‬ ‫کوڈ‬: 6565
فونت
حجت الاسلام سید حسن نصراللہ:
رسا نیوز ایجنسی – حزب اللہ لبنان کے جنرل سکریٹری نے حرم حضرت زینب (س) کے دفاع کو اپنی شرعی ذمہ داری بتاتے ہوئے کہا: لبنان پہلے زیادہ طاقتور بن چکا ہے اگر کسی نے لبنان پر چڑھائی کرنے کی کوشش کی تو ہم لبنان کو دشمنوں کی قبرستان بنادیں گے ۔
حجت الاسلام سيد حسن نصراللہ

 

رسا نیوز ایجنسی کی رپورٹ کے مطابق، حزب اللہ لبنان کے جنرل سکریٹری حجت الاسلام سید حسن نصراللہ نے سنیچر کی رات جنوبی لبنان کے علاقے جبل عامل میں ٹیلی ویژن پر خطاب کرتے ہوئے کہا: تکفیریوں کی شکست صرف شام تک محدود نہیں بلکہ پوری دنیا میں تکفیریت کی شکست ہے ۔


انہوں ںے یہ کہتے ہوئے کہ اگر کسی نے لبنان پر بری نگاہ کرنیکی کوشش کی تو لبنان، دشمن فوجیوں کا قبرستان بن کر سامنے آئیگا کہا: اگر ہم نے آج تکفیریوں کا خاتمہ نہ کیا تو کل یہ تکفیری شام سے نکل کر سب سے پہلے لبنان پر قابض ہونے کی کوشش کریں گے۔


حزب اللہ لبنان کے جنرل سکریٹری ںے شام میں تکفیریوں کے ساتھ حزب اللہ کے نبرد آزما ہونے کے معاملے پر گفتگو کرتے ہوئے کہا: اگر حزب اللہ شام میں تکفیریوں کا مقابلہ نہ کرتی تو تکفیری نہ صرف لبنان بلکہ خطے کی دیگر مسلم ریاستوں کو جو مزاحمت کی حمایت کرتی ہیں، کمزور کرنے کی کوشش کرتے، شام میں تکفیریوں کی شکست صرف شام میں نہیں بلکہ پوری دنیا میں تکفیریوں کے بانی اور حامیوں کی بدترین شکست ہے۔


انہوں نے تکفیری عناصر کی شدید مذمت کرتے ہوئے کہا : لبنان کے بعض افراد تکفیری خطرے کو خطرہ قرار نہیں دیتے، تاہم میں ان سے سوال کرتا ہوں کہ آخر لبنان کے علاقوں میں ہونے والی دہشت گردی کی کارروائیوں میں پھر کون ملوث ہے؟ شام میں تکفیریوں کی بدترین شکست دراصل ان کے حامیوں اور ساتھی ممالک کے منہ پر طمانچے کی مترادف ہے اور اس کا سہرا مزاحمت کے سر پر ہے۔


حزب اللہ لبنان کے جنرل سکریٹری نے یہ کہتے ہوئے کہ نواسی رسول اکرم (ص) سیدہ زینب سلام اللہ علیہا کے حرم مقدس کا دفاع ہماری شرعی ذمہ داری ہے اور ہم اس ذمہ داری سے ذرہ برابر بھی کوتاہی نہیں کرسکتے کہا: سیدہ زینب سلام اللہ علیہا کا حرم مقدس دنیا کے تمام مسلمانوں کے لئے مقدس مقام ہے اور امت مسلمہ کے مقدسات کی حفاظت کرنا حزب اللہ کے لئے باعث فخر ہے۔


حجت الاسلام سید حسن نصراللہ نے غاصب صیہونی ریاست اسرائیل کی جانب سے فلسطینیوں پر ڈھائے جانے والے صیہونی مظالم کی شدید مذمت کرتے ہوئے کہا : اسرائیل بوکھلاہٹ کا شکار ہوچکا ہے اور حزب اللہ کی جو طاقت اسرائیل نے جولائی سنہ 2006 کی جنگ میں دیکھی تھی، آج حزب اللہ کی طاقت اس سے کئی گنا زیادہ ہوچکی ہے اور دشمن کو یہ اندازہ بھی نہیں ہے کہ حزب اللہ کس کس محاذ پر دشمن کو شکست دینے کی مکمل صلاحیت رکھتی ہے۔


انہوں ںے لبنان میں کی جانے والی اندرونی سازشوں کا جواب دیتے ہوئے اور مائیکل سلیمان کو مخاطب کرتے ہوئے کہا : سونا ہمیشہ سونا ہوتا ہے اور اگر کوئی ہم سے کہے کہ یہ سونا نہیں بلکہ لکڑی ہے تو ہم یقین نہیں کرسکتے، لبنانی سونے کو لکڑی سے تبدیل نہیں ہونے دیں گے کیونکہ ملت لبنان نے اسرائیل کو کفن بند کردیا ہے اور مستقبل میں بھی اگر کسی نے لبنان پر بری نگاہ کرنے کی کوشش کی تو لبنان اسرائیل کے فوجیوں کا قبرستان بن کر سامنے آئے گا۔

 

تبصرہ بھیجیں
نام:
ایمیل:
* ‫نظریہ‬:
‫برای‬ مہربانی اپنے تبصرے میں اردو میں لکھیں.
‫‫قوانین‬ ‫ملک‬ ‫و‬ ‫مذھب‬ ‫کے‬ ‫خالف‬ ‫اور‬ ‫قوم‬ ‫و‬ ‫اشخاص‬ ‫کی‬ ‫توہین‬ ‫پر‬ ‫مشتمل‬ ‫تبصرے‬ ‫نشر‬ ‫نہیں‬ ‫ہوں‬ ‫گے‬