08 March 2016 - 08:50
‫نیوز‬ ‫کوڈ‬: 9152
فونت
قائد ملت جعفریہ پاکستان :
رسا نیوز ایجنسی ـ قائد ملت جعفریہ پاکستان نے کہا : اس وقت پورا عالم اسلام جہاں بدامنی و سازشوں کا شکار ہے وہیں عوام بھی انتہائی مضطرب اور گومگو کی کیفیت سے دوچار ہیں ۔
قائد ملت جعفريہ پاکستان


رسا نیوز ایجنسی کی رپورٹ کے مطابق قائد ملت جعفریہ پاکستان حجت الاسلام سید ساجد علی نقوی نے جعفریہ یوتھ کی جانب سے منعقدہ تقریب میں بیان کیا : او آئی سی کو اسلامی دنیا میں بڑھتی ہوئی کشیدگی کے خاتمے کیلئے اپنا مصالحانہ کردار ادا کرنا ہوگا ۔

انہوں نے وضاحت کرتے ہوئے کہا : تعجب ہے اڑھائی سال گزر گئے مگر آج نیب یاد آرہا ہے ملکی ترقی کیلئے عملی اقدامات کئے جائیں، وزیراعظم خواتین کو بااختیار بنانے کی پالیسی کا اعلان باہمی مشاورت سے کریں کہیں حقوق نسواں بل کی طرح یہ بھی متنازعہ نہ بن جائے۔

حجت الاسلام سید ساجد علی نقوی نے کہا : او آئی سی کا اجلاس بلایا جانا خوش آئند ہے، مسئلہ فلسطین و کشمیر ایسے مسائل ہیں جن کا جلد از جلد حل بہت ضروری ہے لیکن ان دونوں اہم مسئلوں کے علاوہ عالم اسلام کی اس نمائندہ تنظیم کو اسلامی ممالک کی باہمی کشیدگی، تنازعات کے حل ، کشت و خون کے خاتمے کیلئے اپنا مصالحانہ کردار بھی ادا کرنا چاہیے ۔

انہوں نے تاکید کرتے ہوئے کہا : اس وقت پورا عالم اسلام جہاں بدامنی و سازشوں کا شکار ہے وہیں عوام بھی انتہائی مضطرب اور گومگو کی کیفیت سے دوچار ہیں جبکہ آئے روز ابھرنے والے فتنوں نے عالم اسلام کی معیشت کو بری طرح متاثر بھی کیاہے، موجودہ صورتحال میں او آئی سی ہی ایسا پلیٹ فارم ہے جس کے ذریعے اگر مخلصانہ مصالحت کی کاوشیں کی جائیں تو وہ بارآور ثابت ہوسکتی ہیں ۔

حجت الاسلام سید ساجد علی نقوی نے ملکی صورتحال کا تذکرہ کرتے ہوئے کہا : آج ایک جانب سے احتساب کی صدائیں بلند کی جاتی ہیں تو دوسری جانب سے نیب پر تنقید کی جاتی ہے لیکن تعجب ہے کہ اڑھائی سالوں میں اس حوالے سے کوئی قانون سازی کی گئی نہ ہی کوئی حکمت عملی مرتب کی گئی کہ کس طرح سے ملک سے کرپشن و نا انصافی کا خاتمہ کیا جائے ۔

انہوں نے تاکید کرتے ہوئے کہا : اب ضرورت اس امر کی ہے کہ اگر اس حوالے سے تبدیلی کرنا مقصود ہے تو پھرتمام سٹیک ہولڈرز سے مشاورت کر کے پارلیمنٹ کے ذریعے کی جائے، انہیں آن بورڈ لیا جائے تاکہ معاملہ گھمبیراور الجھاؤ کا شکار ہونے کی بجائے بہتری جانب بڑھے، اگر ہم چاہتے ہیں کہ پاکستان ترقی کرے تو اس کیلئے ہمیں بیانات کی بجائے عملی اقدامات بھی کرنا ہونگے ۔

قائد ملت جعفریہ پاکستان نے خواتین کے عالمی دن کے حوالے سے گفتگو کرتے ہوئے بیان کیا : 8 مارچ کو اس حوالے سے پوری دنیا میں خواتین کے حقوق کے حوالے سے مختلف فورمز پر آواز بلند کی جاتی ہے لیکن جو حقوق عورت کو اسلامی تہذیب میں حاصل ہیں ان کی مثال کسی اور تہذیب میں نہیں ملتی۔ اسلام نے مر د و خواتین کو یکساں حقوق فراہم کئے ۔

حجت الاسلام ساجد نقوی نے کہا : پنجاب حکومت کی جانب سے حقوق نسواں بل منظور کیا گیا اور اب وزیراعظم کی جانب سے خواتین کو بااختیار بنانے کے حوالے سے پالیسی کا اعلان کیا جا رہا ہے لیکن ہم کہتے ہیں اس معاملے پر تمام اہل فکر و نظر سے مشاورت کی جائے توبہتر ہوگا ایسا نہ ہوکہ پنجاب اسمبلی کے بل کی طرح وزیراعظم کی جانب سے مرتب کی جانے والی پالیسی بھی کسی تضاد کا شکار ہوجائے ۔ اس سلسلے میں اسلامی نظریاتی کونسل سے بھی استفادہ کیا جاسکتا ہے۔
 

تبصرہ بھیجیں
نام:
ایمیل:
* ‫نظریہ‬:
‫برای‬ مہربانی اپنے تبصرے میں اردو میں لکھیں.
‫‫قوانین‬ ‫ملک‬ ‫و‬ ‫مذھب‬ ‫کے‬ ‫خالف‬ ‫اور‬ ‫قوم‬ ‫و‬ ‫اشخاص‬ ‫کی‬ ‫توہین‬ ‫پر‬ ‫مشتمل‬ ‫تبصرے‬ ‫نشر‬ ‫نہیں‬ ‫ہوں‬ ‫گے‬